’قیدی یوکرینی فوجیوں کے قتل کے ثبوت موجود ہیں‘

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption لوہانسک اور دونیتسک میں گذشتہ برس اپریل سے لڑائی کے آغاز کے بعد سے اب تک چھ ہزار افراد مارے جا چکے ہیں

حقوقِ انسانی کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ اس کے پاس ثبوت موجود ہیں کہ مشرقی یوکرین میں روس نواز باغیوں نے چار قیدی یوکرینی فوجیوں کو قتل کیا ہے۔

عینی شاہدین نے تنظیم کو بتایا ہے کہ ایک فوجی کو تو ایک علیحدگی پسند کماندار نے انتہائی قریب سے گولی ماری۔

ایمنسٹی کے مطابق اس کے پاس موجود ویڈیو میں باقی تین فوجیوں کو پہلے قید میں زندہ حالت میں اور پھر مردہ خانے میں ان کی گولیوں سے چھلنی لاشیں دیکھی جا سکتی ہیں۔

ان تینوں کو سر اور جسم کے اوپری حصے میں گولیاں ماری گئی تھیں اور ایمنسٹی کا کہنا ہے کہ یہ ہلاکتیں ’جنگی جرائم‘ کے مترادف ہیں۔

یورپ اور وسطی ایشیا کے لیے تنظیم کے نائب ڈائریکٹر ڈینس کیرووشیف نے کہا ہے کہ ’ان دعوؤں کی فوراً اور جامع انداز میں غیرجانبدارانہ تحقیقات ہونی چاہییں اور اس کے ذمہ داران پر منصفانہ مقدمہ چلانا چاہیے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption رواں برس فروری میں یوکرین میں جنگ بندی کا معاہدہ طے پایا تھا جو تاحال قائم ہے

یوکرینی باغیوں پر فوجیوں کے قتل کے الزامات اس وقت سامنے آئے تھے جب ایک علیحدگی پسند کمانڈر نے یوکرینی اخبار کیئیف پوسٹ کو بتایا تھا کہ اس نے خود 15 ایسے یوکرینی فوجیوں کو قتل کیا جو لڑائی کے دوران پکڑے گئے تھے۔

باغیوں کے ایک مشیر نے بی بی سی کو گذشتہ برس بتایا تھا کہ باغیوں نے اپنے زیرِ اثر علاقے میں ’افراتفری سے بچنے‘ کے لیے ہی قیدیوں کو قتل کیا۔

خیال رہے کہ رواں برس فروری میں یوکرین میں جنگ بندی کا معاہدہ طے پایا تھا جو تاحال قائم ہے تاہم دونوں فریق ایک دوسرے پر اس کی خلاف ورزی کے الزامات عائد کرتے رہے ہیں۔

یوکرین کے مشرقی علاقوں لوہانسک اور دونیتسک میں گذشتہ برس اپریل سے لڑائی کے آغاز کے بعد جہاں چھ ہزار افراد مارے جا چکے ہیں وہیں دس لاکھ سے زیادہ نقل مکانی پر مجبور ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں