سوئٹزلینڈ دنیا کا خوش و خرم ترین ملک

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption رواں سال شائع ہونے والی رپورٹ میں دنیا کے 158 ممالک کے عوام میں خوشی اور اطمینان کا جائزہ لیا گیا

ویسے تو خوشی ناپنے کا کوئی پیمانہ نہیں ہے لیکن ایک تھنک ٹینک نے ایک رپورٹ شائع کی ہے جس میں جائزہ لیا گیا ہے کہ دنیا کے کون سے ممالک ایسے ہیں جن کے عوام خوش ہیں اور اُن کی خوشی کی وجہ کیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق سوئٹزرلینڈ دنیا کا خوش ترین ملک ہے جبکہ اس فہرست میں آئس لینڈ دوسرے نمبر پر ہے۔ ڈنمارک، ناروے اور کینڈا دنیا کے خوش ممالک کی فہرست میں بالترتیب تیسرے چوتھے اور پانچوین نمبر پر ہیں۔

رواں سال شائع ہونے والی رپورٹ میں دنیا کے 158 ممالک کے عوام میں خوشی اور اطمینان کا جائزہ لیا گیا۔

رپورٹ کہتی ہے کہ ٹوگو کا شمار دنیا کے سب سے ناخوش ممالک میں ہوتا ہے، جبکہ برونڈی ناخوش ممالک کی فہرست میں دوسرے، اور شورش سے متاثرہ ملک شام تیسرے نمبر پر ہے۔

عالمی خوشی کی درجہ بندی میں بھارت 117 ویں نمبر پر ہے جبکہ 2013 میں شائع ہونے والی گذشتہ رپورٹ میں بھارت 111 ویں نمبر پر تھا۔

خوشی کے اشاریے میں 158 ممالک کی درجہ بندی کی فہرست میں پاکستان 81 ویں نمبر پر ہے۔ بنگلہ دیش کا نمبر 109واں نمبر پر ہے۔

یہ رپورٹ ایک تھنک ٹینک سسٹین ایبل ڈیویلپمنٹ سلوشن نیٹ ورک (ایس ڈی ایس این) نے ماہرین اقتصادیات، دماغی امراض اور شماریات کے ماہرین کی مدد سے شائع کی ہے۔

ورلڈ ہیپی نیس رپورٹ یا عالمی خوشی کی رپورٹ 2015 میں کہا گیا ہے کہ کسی بھی قوم کی سماجی اور اقتصادی ترقی میں ’خوشی اور اطمینان‘ کا بہت اہم کردار ہے۔ رپورٹ میں تجویز کیا گیا ہے کہ حکومتوں کو منصوبہ بندی کرتے ہوئے عوام کی خوشی کو خصوصی اہمیت دینی چاہیے۔

عالمی خوشی کا اشاریہ 2015
ذنیا کے خوش ترین ممالک ناخوش ترین ممالک
سوئٹزرلینڈ ٹوگو
آئس لینڈ برونڈی
ڈنمارک شام
ناروے بینن
کینیڈا روانڈا

عالمی خوشی کے اشاریہ 2015 میں امریکہ 15ویں، سنگاپور 21ویں، سعودی عرب 35ویں، جاپان 46 ویں اور چین 84 ویں نمبر پر ہے جبکہ خانہ جنگی کا شکار ملک یوکرین 111 ویں نمبر پر فلسطین 108 ویں نمبر پر ہیں، جب کہ عراق کا نمبر 112 ہے۔

اس سے قبل سنہ 2013 میں بھی ایسی ہی ایک رپورٹ شائع کی گئی تھی۔ تاہم سنہ 2015 میں شائع ہونے والی رپورٹ میں انسانی خوشی اور اطمینان کا پتہ لگانے کے لیے زیادہ مفصل تفصیل اور ڈیٹا اکٹھا کیا گیا ہے، تاکہ انسانی فلاح وبہبود کے لیے زیادہ وسائل مختص کرنے کی اہمیت کو اجاگر کیا جا سکے۔

مبصرین کا کہنا ہے کہ ورلڈ ہیپی نیس رپورٹ 2015 موقع فراہم کر رہی ہے کہ عالمی ترقیاتی ایجنڈے میں عوام کی خوشی کو نمایاں مقام دیا جائے۔

اسی بارے میں