دولت اسلامیہ کے سیل، سعودی عرب میں گرفتاریاں

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سعودی عرب دولت اسلامیہ کے خلاف کارروائی کرنے والے ملکوں کے اتحاد کا حصہ ہے

سعودی وزارتِ داخلہ کا کہنا ہے کہ ملک میں 93 افراد کو دولت اسلامیہ سے تعلق رکھنے کے شبہے میں گرفتار کیا گیا ہے۔

سرکاری سعودی پریس ایجنسی کا کہنا ہے کہ ان افراد کو گزشتہ دسمبر سے اب تک گرفتار کیا گیا اور ان میں سے پانچ کے علاوہ تمام سعودی شہری ہیں۔

بیان میں کہا گیا کہ گرفتار کیے جانے والے افراد نے القسیم کے صوبے میں ایک تربیتی مرکز قائم کر رکھا تھا اور وہ خود کش حملوں کی منصوبہ بندی کر رہے تھے۔

خود کش حملوں کے اہداف میں دارالحکومت ریاض میں امریکی سفارت خانہ بھی شامل تھا۔

شدت پسند گروہ دولت اسلامیہ کا شام اور عراق کے وسیع علاقوں پر قبضہ ہے اور سعودی عرب ان ملکوں کے اتحاد میں شامل ہے جو اس تنظیم کے خلاف فضائی حملے کر رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption شدت پسند سکیورٹی فورسز کو بھی نشانہ بنانے کی تیاریاں کر رہے تھے

سعودی وزارتِ داخلہ نے اس گروہ کو گمراہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس کے حامی ملک کی سلامتی کو نقصان پہنچانا چاہتے ہیں۔ دولت اسلامیہ کے رہنما ابو بکر بغدادی نے اپنے حمایوں سے کہا کہ وہ سعودی عرب کے اندر کارروائیاں کریں۔

سعودی وزارتِ داخلہ نے مزید کہا کہ یہ گروہ اپنے مقاصد حاصل کرنے کے لیے بھرپور کوششیں کر رہا ہے۔ گرفتار کیے جانے والوں کے بارے میں حکام کا کہنا تھا کہ ان میں پینسٹھ افراد ایک ایسے سیل سے تعلق رکھتے تھے جو رہائشی علاقوں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی کر رہے تھے اور ملک میں فرقہ واریت کو ہوا دینا چاہتے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گرفتار کیے جانے والے افراد میں پانچ غیر ملکی بھی تھے

ایک اور سیل جس میں پندرہ سعودی شامل تھے وہ کار بم کے تجربات کر رہے تھے اور سیکورٹی تنصیبات، فوجیوں اور رہائشی علاقوں کو ہدف بنانا چاہتے تھے۔

ان میں دو مصری اور ایک سعودی شہری مبینہ طور پر امریکی سفارت خانے کو نشانے بنانے کی تیاری میں تھے اور انھیں مارچ کے وسط میں گرفتار کیا گیا تھا۔

مارچ کے وسط میں امریکی سفارت کارو ں نے ریاض میں اپنےسفارت خانے اور جدہ اور دہران میں کونسلیٹ میں کونسلر سروسز روک دیں تھیں۔

اسی بارے میں