انتخابی جائزوں میں کنزرویٹو پارٹی اکثریت کے قریب

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption انتخابی جائزوں کےمطابق کنزرویٹو پارٹی دارالعوام کی 650 نشتوں میں سے 316 جبکہ لیبر پارٹی 239 نشستوں پر کامیاب ہو سکتی ہے

برطانیہ میں عام انتخابات کے نتائج کے حوالے سے جائزوں کےمطابق کنزرویٹو پارٹی اکثریت حاصل کرنے کے قریب پہنچ سکتی ہے اور وہ دارالعوام کی 650 نشستوں میں سے 316 جبکہ لیبر پارٹی 239 پر کامیاب ہو سکتی ہے۔

ان جائزوں میں سکاٹ لینڈ کی آزادی کی حامی سکاٹش نیشنل پارٹی کی واضح فتح کی پیشنگوئی بھی کی گئی ہے اور کہا گیا ہے کہ وہ سکاٹ لینڈ سے ایک کے سوا دارالعوام کی تمام نشستیں جیت لے گی۔

برطانوی الیکشن میں اہم جماعتیں کون سی اور اہم مسائل کیا ہیں؟ قندیل شام کی رپورٹ

اس کے علاوہ انھی جائزوں میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ موجودہ حکومت میں کنزرویٹو پارٹی کی اتحادی جماعت لبرل ڈیموکریٹس کو شکست فاش ہو سکتی ہے اور وہ ایسی 47 نشستیں ہار سکتی ہے جن پر وہ 2010 کے الیکشن میں جیتی تھی۔

برطانوی دارالعوم میں کسی بھی جماعت کو واضح اکثریت حاصل کرنے کے لیے 326 ممبران کی ضرورت ہونی چاہیے لیکن شمالی آئرلینڈ کی جماعت شین فین کبھی بھی پارلیمنٹ میں اپنی نشستوں پر نہیں بیٹھتی اس لیےاکثریت حاصل کے لیے کسی بھی جماعت کو عملاً 323 ارکان کی ضرورت ہوتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption جائزوں کے مطابق سکاٹش نیشنل پارٹی کو سکاٹ لینڈ میں 59 میں سے 58 نشستوں پر کامیابی حاصل ہو سکتی ہے

ابتدائی جائزوں کے مطابق کنزرویٹو پارٹی کے واضح اکثریت کے قریب ضرور ہے لیکن شاید اسے ایک بار پھر کسی دوسری جماعت سے اتحاد کرنا ہوگا۔

جائزوں کے مطابق سکاٹش نیشنل پارٹی کو سکاٹ لینڈ میں 59 میں سے 58 نشستوں پر کامیابی حاصل ہو سکتی ہے جبکہ نائجل فراج کی جماعت یو کے انڈیپنڈنس پارٹی کو صرف دو نشستیں ملنے کا امکان ہے۔

برطانیہ کے موجودہ وزیرِ اعظم ڈیوڈ کیمرون کی کنزرویٹو جماعت نے 2010 کے الیکشن میں 307 نشستیں جیتی تھیں اور انھوں نے لبرل ڈیموکریٹس کو ساتھ ملا کر پانچ سال حکومت کی۔

لیبر پارٹی نے 2010 کے انتخابات میں 258 نشستیں جیتیں تھیں لیکن اس بار اسے پہلے سے بھی کم نشستیں ملنے کا امکان ہے۔

اسی بارے میں