انڈونیشیا میں آتش فشاں ماؤنٹ سنابنگ پھر جاگ اٹھا

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

انڈونیشیا میں آتش فشاں متحرک ہونے کے بعد اس کے قریب رہنے والے ہزاروں افراد کو فوراً گھروں کو چھوڑنے کا کہا گیا ہے۔

سوماترا جزیرے پر موجود ماؤنٹ سنابنگ نامی آتش فشاں سنہ 2010 میں دوبارہ حرکت میں آگیا تھا لیکن دو جون سے اس کی حرکت میں شدت دیکھی گئی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

سنہ 2010 سے قبل یہ آتش فشاں 400 سال سے زیادہ عرصے سے متحرک نہیں تھا۔

اس آتش فشاں کے قریب رہنے والے تقریباً تین ہزار لوگوں کو وہاں سے جانے کا کہا گیا ہے جن میں سے پیر کو جانے والے افراد کی تعداد 1200 ہے۔

سائنسدانوں کو تشویش ہے کہ آئندہ ہفتوں میں یہ آتش فشاں زیادہ خطرناک ہو سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

پیر کے روز اس آتش فشاں سے گرم راکھ کے کم از کم 28 مختلف بہاؤ دیکھے گئے جو تیزی کے ساتھ پہاڑ سے نیچے کی طرف آئے۔

انڈونیشیا کے سائنسدان گیدی سوانتیکا کا کہنا ہے کہ ’ماؤنٹ سنابنگ پر ابلتے ہوئے لاوے کی علامات دیکھی گئیں ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

آتش فشاں پہاڑ کے اوپر بننے والے سوراخ کے قریب لاوا دکھائی دے رہا ہے جس کے بارے میں خیال کیا جا رہا ہے کہ وہ انتہائی تیزی کے ساتھ نیچے کی طرف آئے گا۔

ایک فوجی کمانڈر نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا ہے کہ دو جون کو آتش فشاں کی حرکت میں شدت دیکھنے کے بعد اسی وقت ریڈ الرٹ جاری کر دیا گیا تھا۔ انھوں نے بتایا کہ آئندہ دنوں میں ہزاروں مزید افراد کو علاقہ خالی کرنا پڑ سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service

گذشتہ سال ماؤنٹ سنابنگ کے پھٹنے کے نتیجے میں گرنے والے پتھروں سے تقریباً 14 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

اسی بارے میں