اجلاس سے قبل آئی ایم ایف کے لیے یونان کی نئی تجاویز

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption یورپی کمیشن، عالمی مالیاتی فنڈ اور یورپی سینٹرل بینک اقتصادی اصلاحات کئے بغیر یونان کے بیل آؤٹ پیکج پر رضا مند نہیں ہیں

یونان کے وزیر نے کہا کہ پیر کو منعقد ہونے والے یورپی یونین کے اجلاس سے قبل وہ بین الاقوامی مالیاتی ادارہ کو نئی تجاویز دیں گے۔

سنیچر کو یونان کے وزیرِ مملکت آلیکوس نے یونانی میڈیا کو بتایا کہ یورپی سینٹرل بینک یونان کے بینک کو ڈوبنے نہیں دے گا۔

اطلاعات ہیں کہ گذشتہ کچھ ہفتوں کے دوران یونان کے بینکوں سے اربوں یورو نکلوائے گئے ہیں۔

یورپی ممالک کا اجلاس ایک ایسے وقت پر ہو رہا ہے جب یونان بین الاقوامی مالیاتی ادارے کے ایک ارب دس کروڑ ڈالر مالیت کے قرض کی عدم ادائیگی کی وجہ سے دیوالیہ ہونے سے بچنے کی کوشش کر رہا ہے۔

یورپی کمیشن، عالمی مالیاتی فنڈ اور یورپی سینٹرل بینک اقتصادی اصلاحات کیے بغیر یونان کے بیل آؤٹ پیکج پر رضا مند نہیں ہیں۔

اُن کا کہنا ہے کہ سات ارب 20 کروڑ یورو کی رقم جاری کرنے سے پہلے یونان ملک میں پنشن، ویلیو ایڈیڈ ٹیکس کے نظام میں اصلاحات متعارف کروائے۔

یونان کی جانب سے متعارف کروائی گئی نئی تجاویز کی تفصیلات جاری نہیں کی گئی ہیں۔

یونان کے وزیراعظم کا کہنا ہے کہ انھیں یقین ہے کہ ’یہ حل یورپی یونین کی عزت و احترام، قوائد اور جمہوریت کی بنیاد پر ہے جو یورو ممالک میں یونان کو دوبارہ ترقی کی راہ پر لے جائے گا۔‘

لیکن جرمنی کی چانسلر انگیلا میرکل نے خبردار کیا ہے کہ پیر کو ہونے والے اجلاس سے قبل یونان اور مقروض ادارے کے درمیان معاہدہ ہو جانا چاہیے۔ نہیں تو اجلاس میں اس بارے میں فیصلہ نہیں کیا جا سکے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption عالمی مالیاتی فنڈ کو قرض کی ادائیگی کے لیے یونان کے پاس دو ہفتے کی مہلت ہے اور اگر قرض کی ادائیگی نہ کرنے پر نہ صرف یورو زون بلکہ یورپی یونین سے بھی نکل جانا کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

وزیراعظم ایلکسس نے دارلحکومت میں ہفتے کو بھی مذاکرات کریں گے۔

عالمی مالیاتی فنڈ کو قرض کی ادائیگی کے لیے یونان کے پاس دو ہفتے کی مہلت ہے اور قرض کی ادائیگی نہ کرنے پر نہ صرف یورو زون بلکہ یورپی یونین سے بھی نکل جانا کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔

جمعہ کو یورپی سینٹرل بینک نے یونان کے بینکاری نظام کے لیے ہنگامی مدد کی منظوری دی تھی۔

خبر رساں ادارہ رائٹرز کا کہنا ہے کہ یونانیوں نے پیر سے جمعے کے درمیان ملکی بینکوں سے چار ارب 20 کروڑ ڈالر نکلوائے جو کہ مجموعی کھاتوں کا تین فیصد ہے۔

صرف جمعہ کو ایک ارب یورو نکلوائے گئے۔

ایک بینکر نے رائٹرز کو بتایا کہ ’بینکوں پر کوئی قطاریں یا بے چینی نہیں دیکھی گئی اور پیسے بتدریج نکلوائے گئے۔‘

یورپ میں بی بی سی کے نامہ نگارکریس مورس کا کہنا ہے کہ بینکوں سے رقوم نکلوانا سے یونانی حکومت اور آئی ایم ایف کے منصوبوں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

انھوں نے کہا کہ اپنے سرمائے پر کنٹرول کا انحصار یونانی عوام کے رویے پر ہے۔

انھوں نے کہا کہ اگر بینکوں سے پیسے نکلوانے کا عمل ہنگامی سطح پہنچ گیا تو معاملہ پالیسی سازوں کے ہاتھوں سے نکل جائے گا۔

اسی بارے میں