’یونان کی ہنگامی امداد طے شدہ حد تک جاری رہے گی‘

یونان تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ابھی تک حکومت نے اس بات پر حد نہیں لگائی کہ لوگ کتنا پیسہ بینکوں سے نکال سکتے ہیں

یورپی سینٹرل بینک (ای سی بی) نے کہا ہے کہ وہ پہلے سے طے شدہ حد تک یونان کے بینکاری نظام کے لیے ہنگامی امداد دیتا رہے گا۔

یورپی سینٹرل بینک نے ہنگامی امداد کی سطح جمعہ کو طے کی تھی۔

ای سی بی نے کہا ہے کہ وہ ایمرجنسی لیکویڈی ایسسٹنس (ای ایل اے) کا ازسرِ نو جائزہ لینے کے لیے تیار رہے گا اور بین آف گریس (یونان کے مرکزی بینک) کے ساتھ قریبی رابطے میں رہے گا۔

بی بی سی کے اکنامکس ایڈیٹر رابرٹ پیسٹن نے کہا ہے کہ ای سی بی یونان کو کوئی اضافی امداد نہیں دے رہا جس کی وجہ سے کیپیٹل کنٹرولز پر بہت زیادہ دباؤ پڑ رہا ہے۔

ای سی بی کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ یونان کی رسائی ابھی بھی ہنگامی امداد تک ہے۔

ای سی بی کے بیان میں یونان کے مرکزی بینک کے گورنر یانیز سٹورناراس نے کہا کہ ’بینک آف گریس، بطور یوروسسٹم کے رکن کے، وہ سبھی ضروری اقدامات کرے گا جن سے یونان کے عوام کو ان مشکل وقتوں میں اقتصادی استحکام ملے گا۔‘

اس سے قبل بی بی سی کو ذرائع سے معلوم ہوا تھا کہ یورپی سینٹرل بینک (ای سی بی) اتوار کو یونان کی ہنگامی امداد ختم کرنے والا ہے۔

ایک معتبر ذرائع نے بی بی سی کے اکنامکس ایڈیٹر رابرٹ پیسٹونا کو بتایا تھا کہ ایمرجنسی لیکویڈی ایسسٹنس (ای ایل اے) کو بند کرنے کا فیصلہ یورپی سنٹرل بینک کی گورننگ کونسل اتوار کو کرے گی۔

یونان کے بینکوں کا دارومدار یورپی سنٹرل بینک کی ہنگامی امداد کے فیصلے پر ہے۔

یونان کے بینکاری نظام میں زندگی کی حیثیت رکھنے والی اس امداد کو منقطع کر دینے سے یونان یوروزون سے باہر نکل سکتا ہے۔ کچھ اقتصادی ماہرین نے کہا تھا کہ ای سی بی شاید ای ایل اے پر روک یا حد لگا دے لیکن اسے بند نہیں کرے گا۔

فرانس کے وزیرِ اعظم مینوئل والز نے کہا تھا کہ ای سی بی ’آزاد ہے لیکن میں نہیں سمجھتا کہ وہ یونان کے عوام کا راشن بند کر دے گی۔‘ انھوں نے کہا کہ ’یہ یونانی قوم ہے جو تکلیف برداشت کر رہی ہے۔‘

بی بی سی کے اکنامکس ایڈیٹر کے مطابق یونان شاید پیر کو ’بینک ہالی ڈے‘ یا بینکوں کی چھٹی کا اعلان کرے۔

قرض کے بوجھ تلے دبے یونان کے بیل آؤٹ پیکج کی ڈیڈ لائن منگل کو ختم ہو جائے گی اور اس پر مذاکرات بھی ناکام ہو چکے ہیں۔

بی بی سی کا کہنا ہے کہ اگر یورپی سنٹرل بینک لائف لائن یا زندگی کی لکیر کاٹ دیتی ہے تو یہ یونان کے بینکوں کے لیے بہت بری خبر ہو گی اور وہ مشکلات میں پھنس جائیں گے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption یونانی پارلیمان نے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئیں شرائط کو ماننے کے بارے میں وہ ریفرنڈم کی حمایت کی تھی

یکم جنوری 1999 کو یورو کے متعارف کیے جانے کے بعد ای سی بی کا یہ سب سے اہم فیصلہ ہو گا۔

کیپیٹل کنٹرول وہ پابندی ہے جو صارف پر لگائی جاتی ہے کہ وہ بینک سے کتنا پیسہ نکال سکتا ہے۔ ابھی تک یونانی حکومت نے ایسے اشارے دیے ہیں کہ وہ اس قسم کا کنٹرول لاگو کرنا نہیں چاہتی۔

اس سے قبل یونان کے وزیراعظم ایلکسس تسیپراس نے اعلان کیا تھا کہ دیوالیے ہونےسے بچنے کے لیے غیر ملکی سرمایہ کاروں کی جانب سے رکھی گئیں شرائط کو ماننے کے بارے میں ریفرنڈم کرائیں گے۔

وزیر اعظم نے کہا تھا کہ یہ ریفرنڈم پانچ جولائی کو کیا جائے گا۔

یونان کو عالمی مالیاتی اداروں اور مشترکہ سکے یورو کے رکن ملکوں سے تقریباً سوا سات ارب یورو کے ہنگامی قرض کی ضرورت ہے۔

اگر جون کے اختتام سے پہلے یہ قرض نہ ملا تو یونان ڈیڑھ ارب یورو سے زیادہ مالیت کے پرانے قرض عالمی مالیاتی اداروں کو واپس ادا نہیں کر پائے گا۔

قرض کی ادائیگی میں ناکامی کا مطلب دیوالیہ پن ہو گا جس کے باعث یونان کو مشترکہ سکے سے خارج کر دیا جائے گا جو پر یورپی اتحاد سے خارج بھی سکتا ہے۔

یونان کو دیوالیہ ہونے سے بچانے اور اس کو یورپی اتحاد میں رکھے جانے کی کوششوں میں یورپی یونین اور یونان کے کئی اجلاس ہوئے ہیں۔

ان مذاکرات میں یونان نے امیروں اور کاروباری اداروں پر نئے ٹیکسوں سمیت سمجھوتے کے لیے نئی تجاویز پیش کی تھیں۔

یونان کا مجموعی قرض اُس کی مجموعی سالانہ قومی پیداوار کے دگنے کے لگ بھگ ہے اور ماہرین کے بقول اگر اُسے ادائیگی میں سہولت نہ ملی تو یونان کے لیے ہر کچھ عرصے بعد نئے قرضوں کے حصول کے چکر سے نکلنا مشکل ہو گا۔

اسی بارے میں