انڈونیشیا میں فوجی طیارہ حادثہ، 141 لاشیں برآمد

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption طیارہ رہائشی علاقے میں گرا اس لیے اس میں زمین پر موجود متعدد افراد بھی ہلاک ہو گئے

انڈونیشیا میں پولیس کا کہنا ہے کہ شمالی سماترا میں ایک مال بردار فوجی طیارے کے ایک رہائشی علاقے پر گر کر تباہ ہونے کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 141 ہو گئی ہے۔

فوجی طیارہ رہائشی آبادی پرگر کر تباہ (تصاویر)

حکام کے مطابق یہ حادثہ منگل کو مدان نامی شہر میں پیش آیا جہاں چار انجن والا ہرکیولیس سی 130 طیارہ رہائشی آبادی پر گر کر تباہ ہو گیا۔

طیارہ ایک ہوٹل اور دو مکانوں پر گرا اور اس میں آگ لگ گئی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اس پر سوار 113 افراد میں سے کوئی بھی شخص زندہ نہیں بچا جبکہ زمین پر موجود درجنوں افراد بھی اس کی زد میں آ کر ہلاک ہو گئے۔ ان کے مطابق ابھی تک جائے حادثہ سے 141 لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

علاقے میں ایک بڑا امدادی آپریشن جاری ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فوجی اور امدادی کارکن ملبے سے لاشوں کو نکالنے میں لگے رہے

بہر حال حادثے کے اسباب کا ابھی تک پتہ نہیں چل سکا ہے تاہم حکام کا کہنا ہے کہ پرواز کے فورا بعد پائلٹ کو بعض تکنیکی مسائل کی وجہ سے فوری طور پر واپسی کا حکم دیا گیا تھا۔

فوج کے ایک ترجمان فواد باسیا نے کہا ہے کہ طیارہ دوپہر 12 بج کر آٹھ منٹ پر فضائیہ کے اڈے سے اڑا تھا اور دو منٹ بعد ہی پانچ کلومیٹر کے فاصلے پر شہر میں گر کر تباہ ہو گیا۔

مقامی ٹی وی چینلوں کے مطابق طیارہ دو مکانات اور ایک کار پر گرا اور اس میں آگ لگ گئی۔

فوجی ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ طیارے پر عملے کے کم از کم 12 افراد سوار تھے۔ اس کے علاوہ اس میں سوار مسافروں میں زیادہ تر فوجیوں کے رشتہ دار تھے اور انھیں دوسری جگہ منتقل کیا جا رہا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption طیارے پر سوار تمام افراد ہلاک ہو گئے ہیں

ایک عینی شاہد الفریدا ایفی نے خبررساں ادارے روئٹرز کو بتایا: ’یہ (طیارہ) کئی بار بہت نیچے سے گزرا۔ اس میں آگ لگی ہوئی تھی اور کالا دھواں نکل رہا تھا۔ تیسری بار جب یہ گھوم کر آیا تو وہ ایک ہوٹل کی چھت سے ٹکرا گیا اور اس کے ساتھ ہی دھماکے سے پھٹ گیا۔‘

انڈونیشیا میں ماضی میں بھی فوجی مال بردار طیاروں کے گرنے کے واقعات پیش آ چکے ہیں۔

سنہ 2009 میں جکارتہ سے مشرقی جاوا جانے والے سی 130 ہرکیولیس طیارے کے حادثے میں 97 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

انڈونیشیا کی فضائیہ ماضی میں کہتی رہی ہے کہ فنڈز کی کمی کی وجہ سے اسے بہت مشکلات کا سامنا رہا ہے۔

اسی بارے میں