زندگی پیاری یا سیلفی؟

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ’سیف سیلفی‘ کی مہم اس وقت شروع کی گئی جب کئی افراد سیلفی لیتے ہوئے حادثات کا شکار ہو گئے

روسی حکومت نے خطرناک حالات میں سیلفی لینے والے نوجوانوں کو اب خطرناک سیلفی لینے سے پہلے کئی بار سوچنے تلقین کرنے کی مہم شروع کی ہے۔

روسی اخبار ازویستیا کی رپورٹ کے مطابق وزارت داخلہ کی ’سیف سیلفی‘ یعنی محفوظ سلیفی مہم کئی حادثات ہو جانے کے بعد شروع کی گئی ہے جن میں کئی نوجوان سیلفی لیتے ہوئے شدید طور پر زخمی یا بعض واقعات میں ہلاک ہو گئے ہیں۔

اس مہم کے نصب العین کے طور پر یہ جملہ پیش کیا گيا ہے کہ ’سوشل میڈیا پر دس لاکھ لائیکس بھی آپ کی زندگی اور آپ کی بھلائی سے بڑھ کر نہیں۔‘

اس سلسلے میں ایک تصویروں سے پر وضاحتی کتابچہ بھی جاری کیا گیا ہے جس میں لوگوں کو خطرناک سیلفیوں کے خطرات سے متنبہ کیا گیا ہے۔ ان میں بجلی کے کھمبے یا ٹاوروں پر چڑھ کر سیلفی لینا، آتی ہوئی ٹرین کے سامنے تصویر لینا یا پھر کسی درندے کے ساتھ تصویر لینا وغیرہ شامل ہے۔

وزارت داخلہ کے مطابق پولیس سکولوں میں سیلفی لینے میں احتیاط برتنے کے متعلق پروگرام منعقد کرے گي۔

تصویر کے کاپی رائٹ MVD
Image caption حکام کا کہنا ہے کہ ایسے کئی حادثات سے بچا جا سکتا تھا

حکام کا کہنا ہے کہ ایسے کئی حادثات سے بچا جا سکتا تھا۔ ماسکو میں مئی میں ایک 21 سالہ خاتون اس وقت بال بال بچیں جب بندوق کے ساتھ سیلفی لیتے ہوئے غلطی سے ان سے بندوق چل گئی۔

ریل گاڑی کی چھت پر سیلفی لینے کی کوشش میں کئی نوجوان بجلی کی تاروں کی زد میں آکر اپنی جان گنوا بیٹھے۔

وزارت کی ایک اہلکار یلینا الیکسییوا نے منگل کو اس مہم کے لانچ کیے جانے کے موقعے پر اخباری نمائندوں کو بتایا: ’تکنیکی ترقی ایک جگہ پر نہیں ٹکی رہتی، اور ہر ترقی کے ساتھ نئے چيلنج اور خطرات سامنے آتے ہیں، ہمارا کتابچہ آپ کو یہ یاد دلائے گا کہ محفوظ سیلفی کس طرح لیں کیونکہ یہ آخری سیلفی نہیں ہے جو آپ لینا چاہتے ہیں۔‘

اسی بارے میں