آتش فشاں کی راکھ سے پروازیں منسوخ، مزید تین ہوائی اڈے بند

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption آتش فشاں سے راکھ اگلنے سے ہوائی اڈے بند کرنے کا فیصلہ عید کے ایک روز قبل سامنے آیا ہے

انڈونیشیا میں آتش فشاں کے راکھ اگلنے کے باعث مزید تین ہوائی اڈے بند کر دیے گئے ہیں جس کے بعد بند کیے جانے والے ہوائی اڈوں کی تعداد پانچ ہوگئی ہے۔

ہوائی اڈوں کی بندش کی وجہ سے لاکھوں کی تعداد میں عید کی چھٹی کے لیے جانے والے مسافروں کو مشکلات کا سامنا ہے۔

مشرقی جاوا میں ماؤنٹ رونگ اور مشرقی ملوکو میں گمالنا کے آتش فشاں گذشتہ ایک ہفتے سے راکھ اگل رہے ہیں جس کے باعث گذشتہ ہفتے مشہور سیاحتی مقام بالی کا ایئرپورٹ بھی بند کر دیا گیا تھا۔

سینکڑوں کی تعداد میں مسافر انڈونیئشیا کے دوسرے بڑے شہر سربایا کے ایئرپورٹ پر پھنسے ہوئے ہیں۔

جمعرات کو حکام کی جانب سے سربایا اور مشرقی جاوا میں مالنگ اور مشرقی ملوکو میں ٹرنیٹ کے ہوائی اڈوں کو بند کرنے کا حکم دیا تھا۔

اس کے علاوہ مشرقی جاوا میں دو اور چھوٹے ہوائی اڈے بھی گذشتہ ہفتے سے بند ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption مشرقی جاوا میں ماؤنٹ رونگ اور مشرقی ملوکو میں گمالنا کے آتش فشاں گذشتہ ایک ہفتے سے راکھ اگل رہے ہیں

آتش فشاں سے راکھ اگلنے سے ہوائی اڈے بند کرنے کا فیصلہ عید کے ایک روز قبل سامنے آیا ہے۔

واضح رہے کہ انڈونیشیا کی آبادی مسلم اکثریت پر مشتمل ہے اور مسلمانوں کے مقدس مہینے رمضان کے آخر میں بھی بڑی تعداد میں لوگ اپنے گھروں کو جاتے ہیں اور ہوائی اڈوں کی بندش سے بڑی تعداد میں لوگ متاثر ہو رہے ہیں۔

آتش فشاں سے اٹھنے والے راکھ کے بادل ہوائی جہازوں کے لیے خطرناک ثابت ہوسکتے ہیں۔ جدید مسافر طیاروں کے انجن اس قدر ہوا لیتے ہیں کہ راکھ کے مادہ گیس میں تبدیل ہو جانے کا اندیشہ ہے جس سے انجن کی کاکردگے متاثر ہوسکتی ہے اور بند ہوسکتا ہے۔

اسی بارے میں