’بھارت کی قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات کی تجویز‘

Image caption پاکستان کو بھارت کی جانب سے قومی سلامتی کے مشیروں کے درمیان ملاقات کی تجویز موصول ہوئی ہے

پاکستان کے وزیراعظم کے مشیر برائے قومی سلامتی اور خارجہ اُمور سرتاج عزیز نے کہا ہے کہ بھارت نے پاکستان کو رواں ماہ کے آخر میں قومی سلامتی کے مشیروں کے درمیان ملاقات کی تجویز دی ہے۔

قومی سلامتی کے مشیر سرتاج عزیز نے بی بی سی کی معصومہ ملک سے بات کرتے ہوئے کہا کہ 23 اور 24 اگست کو دونوں ملکوں کے قومی سلامتی کے مشیروں کے درمیان ملاقات کی تجویز دی ہے۔

پاکستان کے مشیر برائے قومی سلامتی کا کہنا ہے کہ پاکستان بھارت کی تجویز کا جائزہ لے رہا اور اس بارے میں ابھی حتمیٰ فیصلہ نہیں کیا گیا۔

نواز مودی دہلی سے اوفا تک

’گرداس پور میں حملہ کرنے والے پاکستان سے آئے تھے‘

مودی حکومت کی قومی سلامتی کی’سخت گیر‘ ٹیم

یاد رہے کہ بھارت نے پاکستان کے قومی سلامتی کے مشیر سے ملاقات کی تجویز ایک ایسے موقع پر دی جب گذشتہ ہفتہ بھارتی پنجاب کے ضلع گرداس پور میں مسلح افراد کے دہشت گرد حملے میں کم سے کم دس افراد ہلاک ہوئے تھے۔

بھارت کے وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے اس حملے کا الزام پاکستان پر عائد کیا تھا جبکہ پاکستان نے حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا تھا کہ ایسی بیان بازی سے دہشت گردی سے نمٹنے کے اقدامات متاثر ہوں گے۔

دریں اثنا پاکستان نے جذبہ خیر سگالی کے تحت 183 بھارتی ماہی گیروں کو رہا کرنے کا اعلان کیا ہے۔کراچی کی ملیر جیل سے رہا ہونے والے ماہی گیروں کو واہگہ باڈر پر بھارتی حکام کے حوالے کیا جائے گا۔

قومی سلامتی کے مشیر سرتاج عزیز نے کہا کہ پاکستان کو بھارت کی جانب سے قومی سلامتی کے مشیروں کے درمیان ملاقات کی تجویز موصول ہوئی ہے۔

انھوں نے کہا کہ بھارت نے 23 اور 24 اگست کو ملاقات کے لیے کہا ہے۔

سرتاج عزیز نے کہا کہ ’ملاقات کے بارے میں ابھی فیصلہ نہیں کیا گیا اور نہ ہی ملاقات کا ایجنڈا طے ہوا ہے۔‘

یاد رہے کے روس کے شہر اوفا میں وزیراعظم نواز شریف نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی سے ملاقات میں قومی سلامتی کے مشیروں کی ملاقات پر اتفاق کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پاکستان کی فوج کا کہنا ہے کہ بھارت نے گذشتہ دو ماہ کے دوران ’35 مرتبہ‘ سرحدی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے۔

یاد رہے کہ مشیر برائے امور خارجہ و قومی سلامتی سرتاج عزیر نے جمعہ کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں کہا تھا کہ پاکستان میں بھارت کی خفیہ ایجنسی ’را‘ کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں کا معاملہ دونوں ممالک کے درمیان قومی سلامتی کے مشیروں کے آئندہ اجلاس میں اٹھایا جائے گا۔

قومی اسمبلی میں ہی دئیے گئے تحریری جواب میں سرتاج عزیز نے کہا تھا کہ وزیراعظم اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے اجلاس میں ’را‘ کی پاکستان میں مداخلت کا معاملہ اُٹھائیں گے۔

بھارت اور پاکستان کے درمیان حالیہ کچھ عرصے کے دوران حالات کشیدہ ہیں۔ پاکستان کی فوج کا کہنا ہے کہ بھارت نے گذشتہ دو ماہ کے دوران ’35 مرتبہ‘ سرحدی معاہدے کی خلاف ورزی کی ہے۔

اسی بارے میں