کیلی فورنیا کے جنگلات میں آگ، 13 ہزار افراد کے انخلا کا حکم

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption حکام نے اس آگ کو غیرمعمولی قرار دیا ہے

امریکہ کی ریاست کیلی فورنیا کے جنگلات میں 20 مقامات پر لگی آگ کے باعث 13 ہزار افراد کو علاقہ خالی کرنے کا حکم جاری کیا گیا ہے جبکہ آگ بجھانے والا عملہ آگ پر قابو پانے کی کوششوں میں مصروف ہے۔

حکام کے مطابق پیر کو سارا دن آگ بجھانے والے عملے کے تقریباً 9000 ارکان چٹیل پہاڑیوں پر لگی آگ بجھانے کی کوشش کرتے رہے۔

سان فرانسسکو کے شمال میں لگی آگ کو ’راکی فائر‘ کا نام دیا گیا ہے اور اب تک یہ 90 مربع کلومیٹر علاقے میں پھیل چکی ہے۔

پیر کو یہ آگ اس علاقے میں واقع ایک شاہراہ تک پہنچ گئی تھی۔

حکام نے اس آگ کو غیرمعمولی قرار دیا ہے اور اس میں ایک ہفتے کے اندر تین گنا اضافہ ہوا ہے۔

نامہ نگاروں کے مطابق تیز ہواؤں سے پھیلنے والی آگ سے کم از کم 24 گھر تباہ ہوگئے ہیں۔

علاقہ خالی کرنے والے ایک شخص وکی ایسٹریلا کا کہنا تھا: ’میں نے آج تک ایسی آگ نہیں دیکھی۔ ’یہ حیران کن انداز میں پھیل رہی ہے۔ فضا میں 300 فٹ بلند دھواں تھا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption درجہ حرارت میں کمی کے باعث کچھ علاقوں میں آگ پر قابو پانے کی اطلاعات بھی ہیں

امریکہ کے مغربی علاقوں میں چار تک خشک سالی کے باعث بیشتر علاقہ خشکی پر مشتمل ہے۔ آب و ہوا میں نمی، کڑکتی بجلیوں اور تند و تیز ہواؤں کے باوعث آگ بجھانے والے عملے کو سخت حالات کا سامنا ہے۔

درجہ حرارت میں کمی کے باعث کچھ علاقوں میں آگ پر قابو پانے کی اطلاعات بھی ہیں، تاہم بارش متوقع نہیں ہے۔

مغربی امریکہ کے دیگر علاقوں میں بھی جنگلات میں لگی ہے۔ ریاست واشنگٹن میں 300 افراد کو دوسرے علاقوں میں منتقل کیا گیا ہے جبکہ اوریگون میں 15 ہزار ایکڑ رقبہ آگ سے متاثر ہوا ہے۔

اسی بارے میں