مصر میں گرمی کی شدید لہر سے کم سے کم 61 افراد ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption حکام کا کہنا ہے تین گرم ترین دنوں کے دوران درجہ حرارت 47 ڈگری سینٹی گریڈ تک ریکارڈ کیا گیا

مصر کی وزارتِ صحت کا کہنا ہے کہ گذشتہ تین دنوں کے دوارن ملک میں جاری گرمی کی شدید لہر سے کم سے کم 61 افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے تین گرم ترین دنوں کے دوران درجہ حرارت 47 ڈگری سینٹی گریڈ تک ریکارڈ کیا گیا۔

’گرمی کی لہر کی وجہ جاننا ضروری ہے‘

سرکاری میڈیا کے مطابق اتوار اور پیر کے روز گرمی کی وجہ سے ہیٹ سٹروک کی شکار ہونے والے 40 افراد ہلاک ہوئے جبکہ منگل کو 21 افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

حکام کا کہنا ہے کہ گرمی اور ہیٹ سٹروک سے متاثر ہونے والے 581 افراد ہسپتال میں زیر علاج ہیں۔گرمی سے سب سے زیادہ متاثر عمر رسیدہ افراد ہوئے ہیں اور مقامی میڈیا کے مطابق نفسیاتی ہسپتال میں زیر علاج قیدی بھی گرمی سے متاثر ہوئے ہیں۔

مصر کے جیل میں قیدیوں کی دیکھ بھال کا انتظام ناقص ہے اور جیلوں میں قیدیوں کی بھیڑ بھی ہے۔

ملک میں بحلی فراہم کرنے والے محکمے کو بھی شدید تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ دارالحکومت قائرہ سمیت مختلف علاقوں میں کئی گھنٹوں تک بجلی بند رہی اور قاہرہ کا میٹرو ٹرانسپورٹ سسٹم بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے متاثر ہوا۔

جولائی کے آخر سے مشرق وسطیٰ کے ممالک شدید گرمی کی لپیٹ میں ہیں۔

اسی بارے میں