یمن میں فوجی آپریشن، مغوی برطانوی شہری بازیاب

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption گذشتہ چند مہینوں کے دوران یمن میں مختلف گروپوں کے درمیان لڑائی جاری ہے

برطانیہ کی وزارت خارجہ نے کہا ہے کہ ایک فوجی آپریشن کے نتیجے میں ایک برطانوی شہری کو یمن سے بازیاب کرا لیا گیا ہے۔

رہا کروائے جانے والے برطانوی شہری کا نام رابرٹ سیمپل بتایا گیا ہے اور کہا گیا ہے کہ ساٹھ سال سے زیادہ عمر کے سیمپل تیل کی تنصیبات پر ملازم تھے۔

سیمپل کو رواں برس فروری میں یمن میں یرغمال بنا لیا گیا تھا۔

برطانوی وزیر خارجہ فلپ ہیمنڈ نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کی فوج نے برطانوی شہری کو رہائی دلوائی ہے۔

انھوں نے مزید کہا: ’ہم اس تعاون کے لیے متحدہ عرب امارات کے بہت مشکور ہیں۔‘

اس سے قبل رواں مہینے کے اوائل میں فروری میں یمن سے اغوا ہونے والی ایک فرانسیسی خاتون کو بھی بازیاب کروا لیا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption رواں سال مارچ میں سعودی عرب نے یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف فضائی آپریشن شروع کیا تھا

30 سالہ ازابیل پرائم یمن میں عالمی بینک کی معاونت سے مکمل ہونے والے منصوبے میں مشیر کی حیثیت سے کام کرتی تھیں اور 24 فروری کو دارالحکومت صنعا جاتے ہوئے انھیں اغوا کر لیا گیا تھا۔

اُن کی مترجم شیرین ماہکوئی کو بھی یرغمال بنایا لیا گیا تھا۔ تاہم انھیں مارچ میں بازیاب کر لیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ حالیہ چند مہینوں کے دوران یمن میں مختلف گروپوں کے درمیان لڑائی جاری ہے اور اقوام متحدہ کے خصوصی ایلچی کے مطابق ’ملک خانہ جنگی کی طرف جا رہا ہے۔‘

خطۂ عرب میں سرگرم القاعدہ گروپ نے اپنے مضبوط گڑھ سے ملک کے جنوب اور جنوب مشرقی علاقوں میں کئی مہلک حملے کیے ہیں۔

رواں سال مارچ میں سعودی عرب نے یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف فضائی آپریشن شروع کیا تھا۔ جس میں اب تک تین ہزار سے زائد افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

اسی بارے میں