سعودی عرب امریکی یقین دہانی سے مطمئن

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ مشرق وسطیٰ میں امن اور استحکام کے لیے کردار ادا کر سکتا ہے: سعودی وزیر خارجہ

سعودی عرب نے کہا ہے کہ امریکی صدر براک اوباما کی یقین دہانی سے وہ خوش ہے کہ ایران کے ساتھ حالیہ جوہری معاہدے سے خلیجی ممالک کو خطرہ لاحق نہیں ہوگا۔

جمعے کو امریکی صدر براک اوباما اور سعودی فرمانروا شاہ سلمان کی ملاقات کے سعودی وزیرخارجہ عادل الجبیر کا کہنا تھا کہ ان کا ملک مطمئن ہے کہ عالمی طاقتوں کا ایران کے ساتھ جوہری معاہدہ مشرق وسطیٰ میں امن اور استحکام کے لیے کردار ادا کر سکتا ہے۔

مشرق وسطیٰ کے صحرا میں ایرانی جھکڑّ

ان کا کہنا تھا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ ایران اپنے اوپر عائد پابندیاں اٹھائے جانے کے بعد اپنے ’مذموم مقاصد‘ کے بجائے اپنی تعمیر و ترقی پر توجہ دے گا۔

اس سے قبل جنوری میں تخت سنبھالنے کے بعد امریکہ کے پہلے دورہ کرنے والے شاہ سلمان نے واشنگٹن میں صدر اوباما سے ملاقات میں ایران سے جوہری معاہدے پر اپنے خدشات کا اظہار کیا تھا۔

خیال رہے کہ سعودی بادشاہ ایک ایسے وقت امریکہ کے دورے پر پہنچے ہیں جب دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کشیدہ ہیں۔

خلیجی ممالک کو خدشات ہیں کہ ایران پر پابندیاں ختم ہونے کی صورت میں وہ خطے میں عسکریت پسند تنظیموں کی مدد میں اضافہ کر دے گا اور یہ خطے میں عدم استحکام کا باعث بنے گا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption شاہ سلمان نے صدر اوباما سے ملاقات میں ایران سے جوہری معاہدے پر اپنے خدشات کا اظہار کیا ہے

امریکی صدر براک اوباما نے ملاقات میں سعودی بادشاہ پر دیا کہ وہ یمن میں امدادی تنظیموں کو بغیر کسی رکاوٹ کام کرنے کی اجازت دیں۔

سعودی عرب اور امریکہ کے درمیان تعلقات اس وقت کشیدہ ہو گئے تھے جب صدر اوباما نے شام میں صدر بشارالاسد کے خلاف فوجی طاقت استعمال کرنے میں دلچسپی نہیں دکھائی تھی اور اس کے بعد اس میں مزید تناؤ اس وقت آیا جب انھوں نے ایران سے جوہری معاہدے کی حمایت کی۔

سعودی عرب کو خوف ہے کہ اس معاہدے کے نتیجے میں آخر کار ایرانی جوہری بم بنانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔

اس سے پہلے مئی میں سعودی بادشاہ سلمان نے امریکہ کے کیمپ ڈیوڈ میں خلیجی ممالک کے اجلاس میں شرکت نہیں کی تھی اور ان کے اس اقدام کو امریکی صدر کی سرزنش کے طور پر دیکھا گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سعودی بادشاہ ایک ایسے وقت امریکہ کے دورے پر پہنچے ہیں جب دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کشیدہ ہیں

امریکی انتطامیہ نے اس عہد کا عزم کیا ہے کہ وہ ایران کو جوہری معاہدے کی شرائط پر عمل درآمد کا پابند بنائیں گے اور ایران کی خطے کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی سرگرمیوں کو روکنے کے لیے ہر ممکن اقدامات کریں گے۔

امریکہ نے خیلج میں اپنے اتحادیوں کو یقین دہانی کی کوششوں کے تحت ان کے ساتھ دفاعی میزائل نظام پر کام شروع کیا ہے۔ انھیں خصوصی تربیت فراہم کی جا رہی ہے، ہتھیاروں کی منتقلی کی اجازت دی ہے اور سائبر سکیورٹی کو بہتر کیا ہے۔ اس کے علاوہ وسیع پیمانے پر فوجی مشقیں کی جا رہی ہیں اور ایران کی جانب سے اسلحے کی غیر قانونی ترسیل کو روکنے کے لیے سمندری سرگرمیوں میں اضافہ کیا ہے۔

امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے بدھ کو ایک بیان میں کہا تھا کہ ہم اپنے خلیجی اتحادیوں کی ان کی ضرورت کے مطابق سیاسی اور فوجی مدد کرنے کے موقف پر قائم ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption سعودی عرب کو ایران سے مغرب کے جوہری معاہدے پر تحفظات ہیں

امریکی انتظامیہ کے سینیئر اہلکار نے نیویارک ٹائمز اخبار کو بتایا کہ سعودی عرب کو خود کو دولت اسلامیہ کہلانے والی تنظیم اور یمن میں حوثی باغیوں کے خلاف کارروائیوں کے لیے ایک ارب ڈالر مالیت کے اسلحے کی فروخت کے معاہدے کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔

اس معاہدے میں ترجیح امریکی ایف 15 جنگی جہازوں کے میزائلوں کو دی جائے گی۔

دوسری جانب حقوق انسانی اور امدادی تنظیموں نے یمن میں سعودی اتحاد میں جاری فوجی کارروائیوں کی حمایت کرنے پر امریکہ پر تنقید کر رہی ہیں۔ اس کے علاوہ سعودی عرب کے اندر انسانی حقوق کی خراب صورتحال پر متعدد بار خدشات کا اظہار کیا جا چکا ہے۔

اسی بارے میں