تارکین وطن کو نئے راستے کی تلاش، کروئیشیا کی سرحد پر آمد

تصویر کے کاپی رائٹ .
Image caption بہت سے لوگ اس خار دار باڑ کو عبور کرنے کا راستہ تلاش کر رہے ہیں جبکہ دیگر لوگ احتجاجاً کھانے پھینک رہے ہیں

مشرق وسطی کے تارکین وطن کا پہلا گروپ سربیا اور کروئیشیا کی سرحد پر پہنچا ہے جسے یورپی ممالک میں جانے کا نیا راستہ کہا جا رہا ہے۔

ہنگری نے جب سربیا کے ساتھ اپنی سرحد کو بند کر دیا تو تارکین وطن کو لے کر کئی بسیں سیڈ شہر کی جانب روانہ ہوئیں جبکہ ہزاروں افراد جو جرمنی جانے کی کوشش میں ہیں وہ اس فیصلے سے محصور ہو کر رہ گئے ہیں۔

خیال رہے کہ بہت سے تارکین وطن کی منزل جرمنی ہے جبکہ کروئیشیا نے کہا ہے کہ وہ ان لوگوں کو اپنی سرحد سے اس طرح گزرنے نہیں دے گا۔

سرحدوں پر نافذ کی جانے والی نئی پابندیوں اور یورپی ممالک میں کوٹے کے تحت تارکین وطن کو پناہ دینے کے معاملے پر یورپی ممالک میں پناہ گزین کے مسئلے پر شدید اختلافات سامنے آئے ہیں۔

ہنگری کی حکومت کی جانب سے سرحد پر باڑ لگانے کے بعد سینکڑوں تارکینِ وطن ہنگری اور سربیا کی سرحد پر محصور ہو کر رہ گئے ہیں اور انھیں رات کھلے آسمان کے نیچے یا عارضی خیموں میں گزارنی پڑی ہے۔ بہت سے لوگوں نے آگ جلانے کے لیے جنگل سے لکڑیاں اکٹھی کیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ہنگری کی سرحد بند ہونے کے بعد تارکین وطن نئے راستوں کی تلاش میں ہیں

سرحد بند کرنے کے اقدام کی وجہ تارکینِ وطن کو یورپی ممالک میں داخلے سے روکنا ہے۔

گذشتہ شب نئے قانون کے اطلاق کے بعد سے پولیس نے ان ریلوے لائنوں کو بھی بند کر دیا جنھیں ہزاروں تارکینِ وطن استعمال کر رہے تھے۔

یہاں آنے والے بہت سے لوگ اس خار دار باڑ کو عبور کرنے کا راستہ تلاش کر رہے ہیں جبکہ دیگر لوگ احتجاجاً کھانے کو پھینک رہے ہیں۔

ہنگری کے وزیرِ دفاع پیٹر سزیجاترو نے کہا ہے کہ ان کا ملک تارکینِ وطن کو اپنی سرحد کے باہر رکھنے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے۔

بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ تارکینِ وطن ہنگری میں داخلے کی شدید خواہش رکھتے ہیں۔

وہاں موجود ایک گروپ جس کا تعلق افغانستان سے ہے، میں شامل ایک لڑکے نے ایک عارضی کیبن کے دروازے کو کھولنے کی کوشش کی۔ ان کا خیال تھا کہ یہ شاید یہ یورپی یونین میں داخل ہونے کا کوئی نیا دروازہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بہت سے تارکین وطن کو رات کھلے آسمان کے نیچے یا عارضی ٹینٹوں میں گزارنی پڑی

قریب ہی موجود تارکینِ وطن خود کو ملنے والی خوراک اور پانی کو پھینک رہے ہیں۔ احتجاج کرنے والوں میں سے ایک شخص نے چلا کر کہا ’ ہمیں تب تک کھانا یا پانی نہیں چاہیے جب تک ہم سرحد عبور نہ کرلیں‘

نامہ نگار کا کہنا ہے کہ احتجاج کے باوجود ایسا نہیں دکھائی دیتا کہ انھیں باڑ کو عبور کرنے کی اجازت دی جاسکے گی۔

یورپی یونین کی باڈر ایجنسی کے مطابق رواں سال اب تک پانچ لاکھ سے زائد تارکینِ وطن ممبر ممالک میں پہنچے جبکہ گذشتہ برس یہ تعداد تین لاکھ سے کم تھی۔ ان میں سے بہت سے لوگ ایسے ہیں جو سمندری راستہ عبور کر کے یہاں آئے۔

تاہم دوسری جانب سربیا کے وزیرِ الایکسندر ولین نے کہتے ہیں کہ ہنگری کی جانب سے سرحد کو بند کرنا غیر موزوں اقدام تھا۔

بی بی سی سے گفتگو میں ان کا کہنا تھا کہ ہنگری کی حکومت نے انھیں سرحد بند کرنے سے قبل آگاہ نہیں کیا تھا اور دونوں ممالک کے حکام کے درمیان بہت کم ہی رابطہ ہے اور بات چیت باڑ کے اطراف سے ہی ہو رہی ہے۔

منگل کے روز ہی ایک لکری کی کشتی جس میں چار بچے بھی شامل تھے ڈوب گئی۔

اضافی اختیارات

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کی ترجمان کا کہنا ہے کہ یورپی یونین کی جانب سے دو ٹوک ایکشن نہ ہونے کی وجہ سے وہ سمجھتی ہیں کہ تارکینِ وطن کا بحران جاری رہے گا

ہنگری نے ملک کی دو جنوبی کاؤنٹیز میں ایمرجنسی نافذ کر رکھی ہے۔ جو بھی سرحد کو غیر قاونی طور پر پار کرنے کی کوشش کرے گا اسے سزا ہوگی اور سزا دینے کی ڈیوٹی 30 جج صاحبان کو سونپی گئی ہے۔

پناہ کی تلاش میں آنے والوں کی درخواستیں وصول کی جا رہی ہیں تاہم اگر کسی کی درخواست مسترد ہوگئی تو انھیں واپس سربیا آنا ہوگا۔

ہنگری کے حکام کا کہنا ہے کہ نو ہزار سے زائد افراد سرحدوں کو سیل کیے جانے سے قبل ملے تھے۔

ادھر یورپی کمیشن ہنگری کے نئے قانون کو دیکھ رہی ہے کہ آیا وہ پناہ کی تلاش والوں سے متعلق یورپی قانون کے مطابق ہے یا نہیں۔

پولیس کا کہنا تھا کہ انھوں نے 60 افراد کو سرحد پر موجود باڑ کو ہٹانے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

کوٹے پر جھگڑا

تصویر کے کاپی رائٹ REUTERS
Image caption یورپ میں پناہ گزینوں کا مسئلہ ہنگامی صورت اختیار کرتا جا رہا ہے

منگل کو یورپی یونین کے ممبران نے اٹلی اور یونان سے آنے والے 40 ہزار تارکینِ وطن کی دوبارہ آبادکاری پر رضامندی کا اظہار کیا۔ تاہم ابھی ان ممالک کی خود کو تفویض کردہ کوٹے پر عمل درآمد کے لیے رضامندی دی جانا باقی ہے۔جس کے تحت ایک لاکھ 20 ہزار تارکینِ وطن کی مدد کی جائے گی۔

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے کہا ہے یہ مسئلہ صرف مل جل کر حل ہو سکتا ہے۔ اور یہ پورے یورپی یونین کی ذمہ داری ہے۔ تاہم دوسری جانب چیک رپبلک، سلواکیا اور ہنگری نے تارکینِ وطن کے حوالے سے کوٹے کے طریقۂ کار کی مخالفت کی ہے۔

ادھر اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کی ترجمان ملیسا فلیمنگ کا کہنا ہے کہ یورپی یونین کی جانب سے دو ٹوک ایکشن نہ ہونے کی وجہ سے وہ سمجھتی ہیں کہ تارکینِ وطن کا بحران جاری رہے گا۔

جرمنی نے پیر کو سرحد پر عارضی کنٹرول کو متعارف کروایا تھا ۔اس کی بدولت تارکینِ وطن کی آسٹریا جانے کی رفتار میں کمی آئی جہاں 2000 افراد نے رات ریلوے سٹیشن پر ہی گذاری۔

اسی بارے میں