غیر ملکی دباؤ کے باعث عہدہ نہیں چھوڑوں گا : بشارالاسد

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بشارالاسد سنہ 2014 میں 88 اعشاریہ سات فیصد ووٹ لے کر دوسری مرتبہ عہدہ صدارت کے لیے منتخب ہوئے تھے

شام کے صدر بشار الاسد نے کہا ہے کہ وہ غیر ملکی دباؤ کی وجہ سے اپنا اقتدار نہیں چھوڑیں گے۔

روسی ٹی وی کو دیے جانے والے ایک انٹرویو میں صدر بشار الاسد کا کہنا تھا کہ عوام کو فیصلے کا اختیار ہے۔

خیال رہے کہ مغربی طاقتوں کا کہنا ہے کہ شام میں خانہ جنگی کے بعد بشار الاسد کو اقتدار اپنے پاس نہیں رکھنا چاہیے۔

شامی صدر نے کہا کہ ایران ان کی حکومت کی سیاسی، اقتصادی اور فوجی مدد کر رہا ہے۔ تاہم انھوں نے اس دعوے کی تردید کی کہ ایران نے شام میں زمینی فوج بھجوائی ہے۔

بشارالاسد کا کہنا تھا کہ صدر عوام کی مرضی سے انتخابات کے ذریعے اقتدار میں آتا ہے، اور اگر وہ گئے تولوگوں کے مطالبے پر ہی جائیں گے۔

شام کے صدر بشارالاسد سنہ 2014 میں 88 اعشاریہ سات فیصد ووٹ لے کر دوسری مرتبہ عہدہ صدارت کے لیے منتخب ہوئے تھے۔ تاہم خانہ جنگی کے دوران ہونے والے ان انتخابات کے بارے میں اپوزیشن کا کہنا ہے کہ یہ حکومت کے زیرِ قبضہ علاقوں میں ہوئے اور ان کی شفافیت کے بارے میں کچھ نہیں کہا جا سکتا۔

دہشت گردی کی معاونت بند کی جائے

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption شامی خانہ جنگی کے نتیجے میں ہزاروں افراد ملک چھورنے پر مجبور ہوئے

صدر بشارالاسد نے اپنے انٹرویو میں شام کی حانہ جنگی کی وجہ سے ملک چھوڑنے والوں اور اندرونِ ملک نقل مکانی کرنے والوں کے مسئلے پر بات کرتے ہوئے کہا کہ لوگوں نے نقل مکانی دہشت گردی کی وجہ سے کی ہے۔

انھوں نے اس بات پر زور دیا کہ اگر مغربی طاقتیں تارکینِ وطن کے معاملے پر پریشان ہیں تو وہ دہشت گردوں کی مدد کرنا بند کریں۔

ادھر بدھ کو ہی اسرائیلی وزیراعظم نے اعلان کیا ہے کہ وہ اگلے ہفتے روس جائیں گے اور صدر پوتن سے شام میں روسی مداخلت پر بات کریں گے۔

اس سے قبل امریکہ نے بھی شام میں روسی فوج کے اقدمات پر تحفظات کا اظہار کیا تھا۔