تارکینِ وطن کے بحران پر ہمسایہ ممالک میں جھگڑا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption 17 ہزار سے زائد تارکین ِوطن داخلے کے بعد کروئیشیا نے تارکینِ وطن کے لیے دروازے کھولنے کی پالیسی کو تبدیل کر دیا

تارکینِ وطن کے معاملے پر مختلف حکومتوں کے درمیان اختلافات کی وجہ سے یورپ میں شمال مشرق کے راستے سے داخل ہونے والوں کو ایک ملک کی سرحد سے دوسرے ملک کی سرحد کی جانب دھکیلا جا رہا ہے۔

17 ہزار سے زائد تارکین ِوطن کے داخلے کے بعد کروئیشیا نے پناہ تلاش میں آنے والوں کے لیے دروازے کھولنے کی پالیسی کو تبدیل کر دیا۔ اب وہ ہزاروں افراد کو شمال کی جانب بھیج رہا ہے جس کے باعث سلوینیا اور ہنگری ناراض ہو رہے ہیں۔

ہنگری میں داخلے پر جھڑپیں

جرمنی باڈر کنٹرول سروع کرے گا

دوسری جانب ہنگری اپنی سرحد پر خاردار باڑ لگا رہا ہے اور اطلاعات کے مطابق وہ اپنی سرحد پر آنے والے تاررکینِ وطن کو آسٹریلیا بھجوا رہا ہے۔

خیال رہے کہ اگلے ہفتے یورپی یونین میں تارکینِ وطن کے حوالے سے دو اہم اجلاس منعقد ہوں گے۔ پناہ کی تلاش میں آنے والے ان افراد میں سے زیادہ تر کا تعلق شام، افغانستان اور عراق سے ہے۔

ہزاروں تارکینِ وطن رواں ہفتے سربیا کے راستے کروئیشیا میں داخل ہوئے تھے کیونکہ ہنگری نے سربیا سے متصل اپنی سرحد کو بند کر دیا تھا۔ جس کی وجہ سے شمال کی جانب ان کا راستہ کٹ گیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جمعےکو 1000 تارکینِ وطن کو لے جانے والی ریل گاڑی کو حکام کی جانب سے روکتے ہوئے ڈرائیور کو بھی حراست میں لے لیا گیا

جمعے کو کروئیشیا کے وزیرِ اعظم زوران میلانووچ نے خبردار کیا تھا کہ ان کا ملک مزید تارکین وطن کو جگہ دینے کا متحمل نہیں اور ملک میں آنے والے پناہ گزیوں کو ’آگے روانہ کر دیا جائے گا۔‘

ملک کے وزیرِ داخلہ نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ تاکرینِ وطن کی تعداد 17 ہزار سے بڑھ چکی ہے اور 3000 ہنگری سے گزر چکے ہیں۔

ادھر ہنگری نے اپنا موقف بدلتے ہوئے تاکرینِ وطن کو داخلے کی اجازت دے دی ہے۔

جمعےکو 1000 تارکینِ وطن کو لے جانے والی ریل گاڑی کو حکام کی جانب سے روکتے ہوئے ڈرائیور کو بھی حراست میں لے لیا گیا۔

خبر رساں ادارے روئٹرز کا کہنا ہے کہ انھوں نے کروئیشیا کے 40 پولیس اہلکاروں کو غیر مسلح کیا ہے تاہم کروئیشیا نے اس دعوے کی تردید کی اور کہا کہ ان کے افسران ملک واپس لوٹ آئے ہیں۔

اب ہنگری تارکینِ وطن کی رجسٹریشن دو مراکز پر کر رہا ہے اور یہ مراکز آسٹریا کی سرحد کے قریب ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption سلوینیا کی پولیس نے سرحد پر موجود ایک پل پر آنے والے 500 تارکینے وطن پر مرچوں کا سپرے کیا

آسٹریا کا کہنا ہے کہ تارکینِ وطن کو رکھنے کے معاملے پر ہنگری کے ساتھ کوئی بات چیت یا رابطہ نہیں ہوا۔

ادھر سینکڑوں تارکینِ وطن سلوینا کی جانب جا رہے ہیں۔

خبر رساں ادارے اے پی کے مطابق سلوینیا کی پولیس نے سرحد پر موجود ایک پل پر آنے والے 500 تارکین وطن پر مرچوں کا سپرے کیا۔

مرکزی یورپ میں موجود حکومتیں اپنی سرحدوں کی حفاظت نہ کر سکنے کی وجہ سے ایک دوسرے پر شدید تنقید کر رہی ہیں۔ اور زیادہ تر حکومتیں جرمنی پر الزام لگا رہی ہیں کہ اسی نے سب سے پہلے سفر کرنے کے لیے تارکینِ وطن کی حوصلہ افزائی کی تھی۔

اس سے قبل کروئیشیا نے کہا تھا کہ ماسوائے تین مرکزی سڑکوں کے سربیا کے ساتھ منسلک تمام سرحدی راستے بند کر دیے گئے ہیں۔

کروئیشیا پہنچنے والے تارکینِ وطن کو پولیس گھیرے میں لے کر ان کے لیے قائم مراکز میں بھجوا دیتی ہے۔ ان میں سے کچھ کو دارالحکومت زغریب بھجوا دیا جاتا ہے تاہم بہت سے پیدل چل کر سلوینا جانے کی کوشش کرتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption یورپی یونین کے ریگولیشنز کے مطابق تارکینِ وطن جس بھی ممبر ملک میں جائے اسے رجسٹریشن کروانی لازمی ہوگی اور وہ اسی ملک میں پناہ کی درخواست بھی کرے گا

سلوینا کی حکومت توقع کر رہی ہے کہ اگلے 24 گھنٹوں کے دوران وہاں ایک ہزار تارکینِ وطن وہاں پہنچ جائیں گے تاہم حکام نے کروئیشیا پر بہت تنقید کی ہے اور اس سے ٹرین سروس کو بند کر دیا گیا ہے۔

لیکن کروئیشیا کے وزیراعظم نے یہ بھی کہا ہے کہ اگر صورتحال زیادہ خراب ہوئی تو وہ شاید تارکینِ وطن کو محفوظ راستہ دینے کے لیے اپنے علاقوں سے گزرنے کی اجازت دے دیں۔

خیال رہے کہ یورپی یونین کے ریگولیشنز کے مطابق تارکینِ وطن جس بھی ممبر ملک میں جائے اسے رجسٹریشن کروانی لازمی ہوگی اور وہ اسی ملک میں پناہ کی درخواست بھی کرے گا۔تاہم زمینی صورتحال اس سے مختلف ہے کیونکہ تارکینِ وطن کی اکثریت جرمنی اور آسٹریا جانے کی خواہش رکھتی ہے۔

تارکینِ وطن کا بحران اہم تاریخیں

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption 13 سمتبر کو جرمنی نے عارضی باڈر کنٹرول متعارف کر وایا۔
  • 13 جولائی کو ہنگری ہمسایہ مک سربیا سہے متصل سرحد پر خاردار باڑ لگانے کا آغاز کیا۔
  • 19 اگست کو جرمنی نے کہا کہ وہ متوقع طور پر رواں برس میں پناہ کے حصول کے لیے آٹھ لاکھ تاکینِ وطن کی درخواستں وصول کرے گا۔
  • 27 اگست کو آسٹریا میں ایک ٹرک میں سے 71 تارکینِ وطن کی لاشیں برآمد ہوئیں۔
  • دو ستمبر کو تین سالہ بچے کی ترکی کے ساحل پر موجود لاش نے تارکینِ وطن کے مسئلے کو دنیا کے سامنے پیش کیا۔
  • 12 سمتبر کو ہنگری میں 4000 سے زائد تارکینِ وطن داخل ہوئے۔
  • 13 سمتبر کو جرمنی نے عارضی باڈر کنٹرول متعارف کر وایا۔
  • 15 ستمبر کو ہنگری نے سربیا سے اپنے ملک میں داخل ہونے والے تارکینِ وطن کے لیے سخت قانون تشکیل دیا۔اس وجہ سے ہماروں تارکینِ وطن نے کروئیشیا کا روٹ اپنایا۔
  • 18 سمتبر کو کروئیشیا نے تارکینِ وطن کو ہنگری کی جانب بھجوایا تاہم ہنگری نے سرحد پر نئی باڑ لگانے کا آغاز کر دیا۔

اسی بارے میں