منیٰ میں پاکستانی ہلاکتوں کی تعداد 11 ہو گئی

Image caption رواں برس دنیا بھر سے 20 لاکھ سے زیادہ افراد حج کے لیے سعودی عرب میں موجود ہیں

سعودی عرب میں تعینات پاکستانی سفیر منظور الحق کا کہنا ہے کہ حج کے دوران بھگدڑ سے مرنے والے پاکستانیوں کی تعداد 11 ہوگئی ہے۔

منظور الحق نے بی بی سی اردو سے بات کرتے ہو ے بتایا کہ ابھی تک 11 افراد کے اہلِ خانہ اور ساتھیوں نے اپنے عزیزوں کی موت کی تصدیق کی ہے۔

پاکستانی سفیر کے مطابق سفارت خانے کا عملہ مردہ خانوں کا دورہ کر کے مرنے والوں کی شناخت کی تصدیق کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

منطور الحق کہنا تھا کہ امید کی جا رہی ہے کہ آج سعودی انتظامیہ کی جانب سے مرنے والوں کی حتمی فہرست شائع کی جائے گی۔

اگرچہ پاکستانی حجاج کی اموات کی تعداد میں اضافے کو رد نہیں کیا جاسکتا، تاہم لاپتہ پاکستانیوں کے حوالے سے منطور الحق کا کہنا تھا کہ حج میں اکثر لوگ اپنے عزیزوں سے بچھڑ جاتے ہیں اس لیے ضروری نہیں ہے کہ لاپتہ افراد منیٰ کے سانحے سے متاثر ہوئے ہوں۔

اس حوالے سے پاکستانی سفیر نے بتایا کہ کل لاپتہ رپورٹ کیے جانے والے 236 افراد میں سے 86 سےرابطہ ہوگیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption بعض ممالک حادثے کا ذمہ دار ناقص انتظامات کو قرار دے رہے ہیں

پاکستانی سفیر نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ تمام صورتحال پر نظر رکھے ہوئے ہیں اور مسلسل سعودی حکام سے رابطے میں ہیں۔

واضع رہے کہ جمعرات کو منیٰ میں رمی کے عمل کے دوران پیش آنے والے اس حادثے میں سعودی حکام کے مطابق 717 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

پاکستان کی وزارتِ مذہبی امور نے اپنی ویب سائٹ پر مرنے اور زخمی ہونے والے حاجیوں کے ناموں کی فہرست جاری کی ہے۔ فہرست میں حالیہ اضافہ مخدوم زادہ سید اسد مرتضیٰ گیلانی کا ہے۔

پاکستانی میڈیا پر آنے والی خبروں کے مطابق وہ سابق رکن اسمبلی اور مذہبی امور کے پارلیمانی سیکریٹری رہے ہیں۔ وہ سابق وزیرِاعظم یوسف رضا گیلانی کے بھتیجے ہیں۔

اس کے علاوہ اسی ویب سائٹ پر 17 زخمیوں کے نام اور دوسرے کوائف بھی درج ہیں۔

اسی بارے میں