بی بی سی کی صحافی سو لوئڈ رابرٹس انتقال کر گئیں

Image caption سو لوئڈ رابرٹس صحافی ہونے کے علاوہ انسانی حقوق کی سرگرم کارکن بھی تھیں

بی بی سی کی صحافی سو لوئڈ رابرٹس کا انتقال ہو گیا ہے۔ 64 سالہ سو لیوکیمیا کے مرض میں مبتلا تھیں۔

بی بی سی کی نامہ نگار سو نے رواں برس گرمیوں میں مرض کے علاج کے لیے سٹیم سیل ٹرانسپلانٹ کروایا تھا۔

ٹرانسپلانٹ کی وجہ سے پیدا ہونے والی طبی پیچیدگی کے باعث منگل کی شب لندن کے ایک ہسپتال میں وہ انتقال کر گئیں۔

سو بی بی سی سے قبل آئی ٹی این نیوز کے لیے بھی کام کر چکی ہیں اور اپنے صحافتی کیریئر کے دوران انھوں نے شام، عراق اور شمالی کوریا سمیت دنیا کے مختلف ممالک سے رپورٹنگ کے فرائض سرانجام دیے۔

سو لوئڈ رابرٹس صحافی ہونے کے علاوہ انسانی حقوق کی سرگرم کارکن بھی تھیں۔

بی بی سی کے ڈائریکٹر جنرل ٹونی ہال کا کہنا ہے کہ ’وہ ایک بہادر اور پر عزم صحافی تھیں۔ انھوں نے پر خطر مقامات سے رپورٹنگ کر کے لوگوں کی آواز دنیا تک پہنچائی۔‘

ٹونی ہال کا مزید کہنا ہے کہ ’وہ ایک غیر معمولی خاتون تھیں جنھوں نے قابلِ ذکر خبریں رپورٹ کیں۔‘

سو آکسفورڈ یورنیورسٹی سے تعلیم یافتہ تھیں۔ انھوں نے انسانی حقوق کی خلاف وزیوں کے بارے میں دنیا بھر سے رپورٹ کیا۔

سو لوئڈ رابرٹس کی صحافتی خدمات کے اعتراف کے طور پر ملکہ برطانیہ کی جانب سے انھیں سرکاری اعزازات سے بھی نوازا گیا تھا۔

اسی بارے میں