پناہ گزینوں کے معاملے میں جرمنی اور ترکی میں تعاون پر اتفاق

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption دونوں ممالک کے درمیان اتفاقِ رائے کے باوجود کئی معاملات پر اب بھی اختلافات موجود ہیں (فائل فوٹو)

جرمنی اور ترکی نے اعادہ کیا ہے کہ دونوں ممالک پناہ گزینوں کا بحران حل کرنے کے لیے ایک دوسرے کے ساتھ زیادہ تعاون کریں گے۔

انقرہ میں جرمن چانسلر انگیلا میرکل کے ساتھ بات چیت کے بعد ترک وزیرِ اعظم احمد داؤد اوغلو کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر جرمن چانسلر اور ان کی سوچ میں ہم آہنگی پائی جاتی ہے۔

اتوار کو جرمن چانسلر کی ترک وزیر اعظم کے ساتھ بات چیت کے حوالے سے خبر رساں ادارے روئٹرز کا کہنا ہے کہ انگیلا مرکل نے ترکی کو یقین دہانی کرائی ہے کہ ترک شہریوں کے لیے شینگن یورپی ممالک کے ویزے میں آسانی پیدا کرنے کے لیے جرمنی ترکی کی مدد کرے گا۔

بی بی سی کے نامہ نگار کا کہنا ہے کہ دونوں ممالک کے درمیان اتفاقِ رائے کے باوجود کئی معاملات پر اب بھی اختلافات موجود ہیں جن میں یہ معاملہ بھی ہے کہ اپنی سرحدوں پر نگرانی میں اضافے کے لیے ترکی کو یورپی یونین جو مالی مدد فراہم کر رہا ہے اس میں اضافہ کیا جائے گا یا نہیں۔

معاہدے پر عمل کیسے ہوگا یہ طے نہیں ہوا: ترکی

یورپی یونین ترکی سے معاہدے کی حامی

یاد رہے کہ یورپی یونین کے رہنماؤں نے بلیجیئم کے دارالحکومت برسلز میں حالیہ دنوں میں ترکی کے ساتھ مذاکرات میں ترکی کو زیادہ مالی امداد اور ویزوں میں نرمی کا عندیہ دیا تھا، تاہم کہا جا رہا ہے کہ جرمن چانسلر کو اس سلسلے میں مشکل صورتحال کا سامنا ہے کیونکہ وہ یورپی یونین میں ترکی کی رکنیت کی مخالف ہیں لیکن انھیں پناہ گزینوں کے معاملے میں ترکی کے تعاون کی فوری ضرورت بھی ہے۔

ترکی کا مطالبہ ہے کہ وہ شام سے ترکی پہنچنے والے 20 لاکھ سے زائد پناہ گزینوں کی میزبانی کر رہا ہے اور یورپی ممالک کو اس کے اس کردار کو زیادہ سراہنا چاہیے اور اس کی امداد میں اضافہ کرنا چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ہنگری نے جمعہ کو سرحد بند کرنے کا فیصلہ اس وقت کیا جب یوروپی رہنما ہنگری کے حمایت یافتہ ایک منصوبے پر اتفاق کرنے میں ناکام رہے

جرمن چانسلر کے ترکی پہنچنے سے پہلے اتوار کو موصول ہونے والی خبربں میں بتایا گیا تھا کہ ہنگری کی جانب سے کروئیشیا سے متصل سرحد بند کیے جانے کے بعد ہزاروں کی تعداد میں پناہ گزین سلووینیا پہنچنا شروع ہو گئے ہیں۔

سنیچر کو ہنگری کی جانب سے سرحد بند کرنے کے بعد سلووینیا کے وزیرِاعظم میرو سیرار نے ان پناہ گزینوں کو سنبھالنے کے معاملے میں فوج کو پولیس کی مدد کرنے کا حکم دیا تھا۔

سنیچر کو کروئیشیا سے 27 سو پناہ گزین سلووینیا میں داخل ہوئے اور توقع کی جا رہی ہے کہ اس سے زیادہ تعداد میں سنیچر اور اتوار کی درمیانی شب کو سلووینیا میں داخل ہو جائیں گے۔

سلووینیا کے حکام کا کہنا ہے کہ آنے والے دنوں میں یہ تعداد ہزاروں میں پہنچ سکتی ہے۔

سنیچر کو پناہ گزینوں کے مسئلے پر سلووینیا کی قومی سلامتی کونسل کے اجلاس کے بعد وزیرِ اعظم میرو سیرار نے کہا تھا کہ حکومت نے پولیس کی مدد کے لیے فوج طلب کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اقوامِ متحدہ کے ادارے برائے پناہ گزیناں کے مطابق سلووینیا پہنچنے والے پناہ گزینوں کو پولیس نے رجسٹریشن کے بعد آسٹریا کی سرحد کے قریب واقع ایک کیمپ میں پہنچا دیا ہے۔

یورپ میں پناہ چاہنے والوں کے لیے ہنگری ایک اہم پڑاؤ رہا ہے جہاں سے بیشتر پناہ گزیں آ‎سٹریا اور جرمنی کی طرف جاتے رہے ہیں۔

سلووینیا کی وزیرِ داخلہ ویسنا زنیدار نے کہا ہے کہ ان کا ملک اس وقت تک پناہ گزینوں کو داخلے کی اجازت دیتا رہے گا جب تک اس کی جرمنی اور آسٹریا سے متصل سرحد کھلی ہے۔

ہنگری نے کروئیشیا سے متصل سرحد بند کرنے کا فیصلہ اس وقت کیا جب یورپی رہنما اس منصوبے پر اتفاق کرنے میں ناکام رہے جس میں یہ تجویز پیش کی گئی تھی کہ یونان پہنچنے کی کوشش کرنے والے پناہ گزینوں کو روکنے کے لیے فوج بھیجنی چاہیے۔

ہنگری اس سے پہلے سربیا سے متصل اپنی سرحد کو پہلے ہی بند کر چکا ہے۔

اسی بارے میں