بحرین میں شاہ کی تصویر پھاڑنے والی کارکن کو ایک سال قید

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption عدالت نے زینب پر تین ہزار بحرینی دینار کا جرمانہ بھی عائد کیا ہے اور اگر وہ جرمانے کی یہ رقم نا ادا کر پائیں تو ان کی سزا میں ڈیڑھ برس کا اور اضافہ ہو جائے گا

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ بحرین کی اعلیٰ عدالت نے اس سیاسی کارکن کو ایک برس قید کی سزا سنائی ہے جس نے عدالت میں ملک کے بادشاہ کی تصویر پھاڑ دی تھی۔

کمرہ عدالت میں تصویر پھاڑنے کا یہ واقعہ سنہ 2014 کا ہے۔

بحرین کی اپیل عدالت نے زینب الخواجہ کو شاہ کی توہین کرنے کا قصوروار ٹھہرانے کے نچلی عدالت کے فیصلے کی تصدیق کی لیکن اس مقدمے میں نچلی عدالت کی جانب سے تین برس قید کی سزا کو کم کرکے ایک برس کر دیا۔

عدالت نے زینب پر تین ہزار بحرینی دینار کا جرمانہ بھی عائد کیا ہے اور اگر وہ جرمانے کی یہ رقم نہ ادا کر پائیں تو ان کی سزا میں ڈیڑھ برس کا اضافہ ہو جائے گا۔

اس معاملے پر بحرین کے محکمہ عدالت کے حکام کی جانب سے فوری طور پر کوئی بیان سامنے نہیں آیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption 2011 سے بحرین میں ہونے والے پر تشدد مظاہروں کے آغاز سے اب تک زینب کئی بار گرفتار ہوئی ہیں اور جیل گئی ہیں اور اس معاملے میں وہ پہلے ہی تقریبا ایک برس قید کی سزا کاٹ چکی ہیں

32 سالہ زینب الخواجہ بحرین کے سرکردہ سیاسی کارکن عبدالہادی الخواجہ کی بیٹی ہیں جو اس وقت جیل میں عمر قید کی سزا کاٹ رہے ہیں۔

2011 میں جمہوریت حامی مظاہروں میں اہم کردار ادا کرنے کے لیے عبدالہادی کو عمر قید کی سزا سنائی گئی تھی۔

2011 سے بحرین میں ہونے والے پر تشدد مظاہروں کے آغاز سے اب تک زینب کئی بار گرفتار ہوئی ہیں اور جیل گئی ہیں اور اس معاملے میں وہ پہلے ہی تقریباً ایک برس قید کی سزا کاٹ چکی ہیں۔

اس وقت انھوں نے تین دیگر معاملات میں سزا کے خلاف اپیل دائر کر کھی ہے۔ مظاہروں کے دوران تصویر پھاڑنے کا اسی نوعیت کا ایک اور معاملہ بھی ہے جس کے لیے انھیں چار ماہ کی قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

اس کے علاوہ ان پر جیل میں والد سے ملاقات کرنے کی کوشش کے دوران ایک حکومتی افسر کے ساتھ بدسلوکی کا مقدمہ بھی درج کیا گيا تھا جس میں انھیں آٹھ ماہ قید کی سزا سنائی گئی۔

بحرینی عدالت کا یہ فیصلہ ان کی 32ویں سالگرہ کے موقعے پر آیا ہے اور اس مناسبت سے ان کے حامی دیگر سیاسی کارکنان نے اس جانب توجہ مبذول کرانے کے لیے سوشل میڈیا پر ایک مہم شروع کی ہے جو ’ہیپی برتھ ڈے زینب‘ کے ہیش ٹیگ کے ساتھ جاری ہے۔

زینب کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ اگر انھیں جیل جانا پڑا تو وہ اپنے کم سن بچے کو قید خانے میں ساتھ رکھیں گی۔

اسی بارے میں