سویڈش سکول میں تلوار بردار نقاب پوش کا حملہ، دو ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس نے حملہ آور کو گولی مار کر قابو کیا

سویڈن میں ایک نقاب پوش حملہ آور نے ایک سکول میں گھس کر تلوار کے وار سے کم سے کم دو افراد کو ہلاک اور دو کو شدید زخمی کر دیا ہے۔

ہلاک ہونے والوں میں ایک طالبعلم اور ایک استاد شامل ہیں۔

پولیس نے حملہ آور کو بھی گولی مار کر قابو کر لیا ہے اور وہ اب مقامی ہسپتال میں زیرِ علاج ہے۔

یہ واقعہ جمعرات کو ملک کے مغربی قصبے ٹرولاٹن میں پیش آیا اور کرونن نامی سکول سے سینکڑوں بچے چیختے چلاتے بھاگتے دکھائی دیے۔

پولیس حکام نے سویڈن کے خبر رساں ادارے ٹی ٹی کو بتایا ہے کہ انھیں ہنگامی لائن پر سکول کے کیفے ٹیریا میں حملے کی اطلاع مقامی وقت کے مطابق صبح دس بج کر دس منٹ پر ملی تھی۔

حکام کا کہنا ہے کہ حملے کے دوران ایک استاد تو موقع پر ہی ہلاک ہوگیا تھا جبکہ 11 اور 15 سال کے دو طلبا اور ایک استاد کو ہسپتال منتقل کیا گیا۔

ہسپتال لائے جانے والے طلبا میں سے بھی ایک زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا ہے۔

سویڈن کے وزیرِ داخلہ نے ٹوئٹر پر کہا ہے کہ سکول پر حملے کا یہ واقعہ انتہائی افسوس ناک ہے اور ان کی ہمدردیاں متاثرہ خاندانوں کے ساتھ ہیں۔

ایک طالبعلم نے سویڈش ٹی وی کو بتایا کہ ابتدائی طور پر طلبا سمجھے کہ یہ کوئی مذاق ہے۔

ان کے مطابق ’حملہ آور نے نقاب اور سیاہ لباس پہنا ہوا تھا اور اس کے پاس ایک لمبی تلوار تھی۔‘

پولیس کے ترجمان ٹامس فکسبرگ نے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس کو بتایا ہے کہ حملہ آور کی عمر 20 سے 30 برس کے درمیان ہے اور اس کے پاس ایک سے زیادہ ہتھیار تھے۔

ترجمان نے کہا کہ پولیس نے دو گولیاں چلائیں جن میں سے ایک سے حملہ آور زخمی ہوا۔

اسی بارے میں