سلووینیا کی وارننگ: یورپی اتحاد بکھر جائے گا

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption ہنگری نے سربیا اور کرویشیا کے ساتھ اپنی سرحدیں بند کرنے کا فیصلہ گزشتہ ہفتے اور اتور کو کیا تھا

سلووینیا کے وزیرِ اعظم میرو سیرار نے متنبہ کیا ہے کہ تارکینِ بحران سے نمٹنے کے لیے اگر ٹھوس اقدام نہ کیے گئے تو یورپین یونین کا شیرازہ ’بکھرنا شروع ہو جائے گا۔‘

ادھر جرمن چانسلر آنگیلا میرکل نے کہا ہے کہ ترکی کی مدد کے بغیر تارکینِ وطن کے بحران سے نمٹنا ممکن نہیں ہے۔

یورپی رہنماؤں کے یہ بیانات بیلجیئم کے دارالحکومت برسلز میں ایک ہنگامی اجلاس کے دوران سامنے آئے ہیں جس میں مرکزی یورپ اور بلقان ریاستوں کے رہنما پناہ گزینوں کے بحران پر مذاکرات کر رہے ہیں۔

اس اجلاس میں یورپی یونین کے دس اور تین غیر یورپی ممالک حصہ لے رہے ہیں جبکہ اجلاس سے ترکی کی عدم موجودگی پر سوال اٹھ رہے ہیں۔

اجلاس میں پیش کردہ ایک مسودے میں اس بات کا مطالبہ کیا گیا ہے کہ کوئی ملک پناہ گزینوں کو پہلے سے طے شدہ معاہدے کے بغیر کسی دوسرے ہمسایہ ملک کی جانب روانہ نہیں کرے گا۔

ہنگری کی جانب سے اپنی سرحد بند کر دینے کے بعد حالات کی کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے جس کے باعث پناہ گزین کروئیشیا اور سلووینیا سے گزر کر شمال کی جانب اپنا سفر جاری رکھنے پر مجبور ہو گئے ہیں۔

سرحدوں کی بندش کی وجہ سے ہزاروں افراد سخت سردی میں کھلے آسمان کے نیچے رات گزارنے پر مجبور ہیں۔

یورپین یونین کے صدر جین کلاڈ جنکر نے کہا ہے کہ ان کشیدہ حالات میں ان ممالک کو پناہ گزینوں کو اپنے ہمسایہ ممالک کے حوالے نہیں کرنا چاہیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP Getty Images
Image caption سلووینیا کی حکومت نے الزام عائد کیا ہے کہ کروشیا نے عمداً و قصداً ہزاروں پناہ گزینوں کو اس کی سرحد پر دھکیل دیا ہے

برسلز میں منعقد ہونے والا یہ اجلاس مسٹر جنکر نے بلایا ہے اور ان کا کہنا ہے کہ ’یہ ایک دن اہم ہے‘۔

انھوں نے مزید کہا کہ اگر کوئی معاہدہ نہ ہو پایا تو ’بہت جلد ہم بلقان کے سرد دریاؤں میں خاندانوں کو بری طرح سے مرتا دیکھیں گے۔‘

اس اجلاس میں آسٹریا، بلغاریہ، کروئیشیا، میسیڈونیا، جرمنی، یونان، رومانیہ، سربیا اور سلووینیا کے رہنما شریک ہیں۔

کہا جا رہا ہے کہ مسٹر جنکر اس اجلاس میں ایک 16 نکاتی پلان پیش کریں گے جس میں یہ عہد بھی شامل ہو گا کہ کوئی ملک پناہ گزینوں کو پہلے سے طے شدہ معاہدے کے بغیر کسی دوسے ملک کی جانب روانہ نہیں کرے گا۔

مسٹر جنکر کا کہنا ہے کہ ’اب مسئلہ یہ ہے کہ پناہ گزینوں کی آمد کی رفتار کو کس طریقے سے سست کیا جائے اور ہم اپنی بیرونی سرحدوں کو کس طرح کنٹرول کریں۔‘

ہنگری نے سربیا اور کروئیشیا کے ساتھ اپنی سرحدیں بند کرنے کا فیصلہ گذشتہ سنیچر اور اتور کو کیا تھا۔

اس سرحد بندی کے نتیجے میں اس سنیچر تک 58,000 پناہ گزین سلووینیا پہنچے۔ بیشتر افراد بارش اور سردی میں انتظار کر رہے ہیں۔

اسی بارے میں