مانٹریال میٹرو سٹیشن جدید فن تعمیر کا نمونہ

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption یہ کینیڈا کے فن تعمیر کے فوٹوگرافر کرس فورستھ کے فن کا نمونہ ہے جنھوں نے یہ بتانے کی کوشش کی ہے کہ ہمارے ارد گرد کتنے خوبصورت ڈیزائن ہیں

گذشتہ ہفتے سنہ 1980 کی دہائي میں نیویارک کے سب وے (زیر زمین) نظام کو پیش کیا گیا تھا جس میں ہر ایک پر کچھ نہ کچھ ثبت تھا اور ہر کوئی فن کا نمونہ تھا اور آج پیش ہے مانٹریال کا میٹرو نظام۔

یہ جدید ترین صورت ہے جس میں ہائی ٹیک، چمچماتے دھاتوں سے تیار سٹیشن ہیں اور ہر ایک فن تعمیر کا جیتا جاگتا نمونہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption مانٹریال کے میٹرو نظام جدید فن تعمیر کا نمونہ تصور کیے جاتے ہیں

یہ کینیڈا کے فن تعمیر کے فوٹر گرافر کرس فورستھ کے فن کا نمونہ ہے جنھوں نے اپنی ان تصاویر کو انسٹا گرام پر شیئر کیا ہے اور یہ بتانے کی کوشش کی ہے کہ ہمارے ارد گرد کتنے خوبصورت ڈیزائن ہیں۔

انھوں نے کہا: ’کسی بھی تصویر میں ہم جامد اور متحرک منظروں کا تضاد دیکھنا چاہتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption ہر سٹیشن کو مختلف ماہر فن تعمیر نے ڈیزائن کیا ہے

’ہمیں میٹرو نظام کے فن تعمیر اس لیے پرکشش لگتے ہیں کیونکہ ان میں تنوع ہے اور ہر سٹیشن مختلف ہے۔ مجھے رنگوں، فن تعمیر کے سٹائل اور اثرات سے محبت ہے اور ان سب سے زیادہ پرکشش اس کی نمایاں گرافک صورت ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption سادہ اشتہاری بورڈ بھی فن تعمیر کی خوبصورتی اجاگر کر رہا ہے

مانٹریال میں رہنے کی وجہ سے فورستھ کو اس کام میں آسانی ہوئی۔ ایک طرح سے آپ کہہ سکتے ہیں کہ جدیدیت سے متاثر فن تعمیر کے نمونے کے شہر میں رہے جہاں ہر ایک سٹیشن فن کا نمونہ ہے اور ہرایک کو مختلف ماہر فن تعمیر نے ڈیزائن کیا ہے اور اب یہ تقریبا 50 سال کی ہو چکی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption یہاں ایک گزرتی ہوئی ٹرین کو دیکھا جا سکتا ہے جو گرافک کی شکل میں ہے

فورستھ نے اس میں طویل ایکسپوزر کا استعمال کیا ہے تاکہ حرکت کو دھندلا کیا جاسکے اور تصویر لیتے وقت وہاں سے گزرنے والے افراد کا نشان ختم کیا جاسکے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption اسومپشن سٹیشن پر فورستھ نے روشنی کے نظام پر توجہ مرکوز کی ہے

بعض اوقات انھوں نے کئی فریم کو ملا دیا ہے تاکہ ایک تصویر بغیر کسی زندگی کے بن سکے۔ انھوں نے بتایا کہ تصویر سے لوگوں کو ہٹانے کے پیچھے اپنی ہی توجیہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption بعض تصاویر جیمز بانڈ کی فلم کا منظر پیش کرتے ہیں

’پہلی بات یہ کہ جب وہاں بہت سارے لوگ ہوں تو توجہ فن تعمیر سے ہٹ جاتی ہے۔ اس کے علاوہ کیوبک میں لوگوں کی تصویر بغیر ان کی مرضی کے لینا ممنوع ہے اس لیے یہ ضرور مسائل پیدا کرسکتا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption لا ایگلس سٹیشن پر سکیلیٹر کو دیکھا جا سکتا ہے

’میٹرو میں تصویر لینے کے دوران میں کسی قسم کے رخنے سے بچنا چاہتا ہوں۔‘

اس لیے یہ فنی اور قانونی دونوں اعتبار سے اہم ہے۔ وجہ خواہ کچھ بھی ہو اس کی وجہ سے چند خوبصورت تصاویر معرض وجود میں آ گئی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Chris Forsyth
Image caption سمتھ کی تصاویر میں لوگ نہیں ہیں یہاں شربروک سٹیشن پر ایک شبیہ کو دیکھا جا سکتا ہے

آپ فورستھ کی میٹرو کی تصاویر کو mtlmetroproject# ہیش ٹیک پر دیکھ سکتے ہیں۔

اسی بارے میں