دولتِ اسلامیہ کے جنگجو کی بیوی کا اعترافِ جرم

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption محمد العمر نے 2013 میں دولت اسلامیہ کے ساتھ لڑنے کے لیے شام اور پھر عراق کا سفر کیا

آسٹریلیا کے بدنام زمانہ جنگجو محمد العمر کی بیوی نے بیرون ملک دہشت گردی کی معاونت کرنے کا اعتراف کر لیا ہے۔

فاطمہ العمر کو اس سال مئی میں سڈنی کے ایئرپورٹ پر اس وقت ایک بین الاقوامی پرواز پر سوار ہونے سے روک دیا گیا تھا جب ان کے قبضے سے نقدی، پوشیدہ سامان اور ادویات برآمد ہوئی تھیں۔

انھوں نے بیرون ملک دہشت گردی پھیلانے میں معاونت کے الزام کے خلاف درخواست دی تھی تاہم پیر کو عدالت کی مختصر سماعت کے دوران انھوں میں بیرونِ ملک مخالفانہ سرگرمیوں کے ارادے سے دہشت گردی کی معاونت کرنے کا اعتراف کر لیا۔

عدالتی دستاویزات میں فاطمہ العمر کی اپنے شوہر محمد العمر کے درمیان پیغامات کے تبادلے کی تفصیلات موجود ہیں۔ جن کے مطابق فاطمہ عمر کی منت کرتی ہیں کہ وہ علاج کے لیے گھر لوٹ آئیں۔

عمر جو گولی لگنے کے باعث زخمی ہو گئے تھے، جواب میں فاطمہ سے کہتے ہیں کہ وہ بچوں کے اور اپنے پاسپورٹ تیار کریں تاکہ وہ رقہ میں اکٹھے ہوسکیں۔

محمد العمر نے 2013 میں دولت اسلامیہ کے ساتھ لڑنے کے لیے شام اور پھر عراق کا سفر کیا۔ بعد میں ان کے ایک اور آسٹریلوی ساتھی خالد شروف بھی ان کے ساتھ شامل ہو گئے۔

یہ دونوں ساتھی اس وقت لوگوں کی توجہ کا مرکز بنے جب انھوں نے سوشل میڈیا پر کٹے ہوئے انسانی سروں کے ساتھ اپنی تصاویر جاری کیں۔ان میں سے ایک تصویر میں شروف کا سات سالہ بیٹا ایک شامی فوجی کا سر ہاتھ میں لیے کھڑا ہے۔

خیال ہے کہ العمر اس سال جون میں شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے خود ساختہ دارالحکومت رقہ کے قریب ایک فضائی حملے میں ہلاک ہو چکے ہیں۔

آسٹریلوی حکومت کے ایک حالیہ اندازے کے مطابق اس وقت تقریباً 120 آسٹریلوی شہری عراق اور شام میں دولت اسلامیہ اور دیگر جنگجو تنظیموں میں شامل ہیں۔

اسی بارے میں