’سعودی عرب میں ایک دن میں درجنوں کو سزائے موت دینے کا منصوبہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ Facebook
Image caption علی النمر کے علاوہ عبداللہ الظہیر اور حسین المرہون بھی ان چھ افراد میں شامل ہیں جن کو جس وقت گرفتار کیا گیاتھا وہ نابالغ تھے

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ان اطلاعات پر تشویش کا اظہار کیا ہے جن کے مطابق سعودی عرب کے حکام ایک دن میں درجنوں افراد کی سزائے موت پر عملدرآمد کریں گے۔

سعودی عرب کی ایک اخبار عکاظ کے مطابق ملک میں ’دہشت گردی‘ کے مجرم 55 افراد کی سزائے موت پر عملدرآمد ہونا باقی ہے۔

نوجوان کو سزائے موت، ’امید ہے شاہ سلطان دستخط نہیں کریں گے‘

سعودی عرب میں شراب بنانے والے برطانوی کی رہائی

قطیف میں فائرنگ سے دو پولیس اہلکار ہلاک

دوسری جانب الریاض اخبار کے مطابق 52 افراد کی سزائے موت پر جلد عملدرآمد کیا جائے گا۔ تاہم اس اخبار نے بعد میں یہ خبر ہٹا دی۔

اندازوں کے مطابق ان افراد میں ایسے شیعہ افراد بھی شامل ہیں جنھوں نے حکومت مخالف مظاہروں میں حصہ لیا تھا۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل میں ایک بیان میں کہا ہے کہ سعودی عرب میں سزائے موت پر عملدرآمد میں اضافے کے نتیجے میں وہ ان خبروں کو سنجیدگی سے لے رہی ہے۔

تنظیم کا کہنا ہے کہ ایک اندازے کے مطابق اس سال 151 افراد کی سزائے موت پر عملدرآمد کیا گیا ہے جو کہ 1995 سے اب تک سب سے زیادہ تعداد ہے۔

عکاظ اخبار کے مطابق جن مجرموں کی سزاؤں پر عملدرآمد کیا جائے گا ان میں القاعدہ کے شدت پسند اور عوامیہ علاقے کے لوگ ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption اخبار کے مطابق القاعدہ کے دہشت گردوں کو حکومت کا تختہ الٹنے اور چھوٹے اسلحے، بارودی مواد اور زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائلوں سے حملے کے جرم میں موت کی سزا سنائی گئی ہے

واضح رہے کہ عوامیہ سعودی عرب کے مشرقی صوبے کے شہر قطیف میں واقع ہے۔

اخبار کے مطابق القاعدہ کے دہشت گردوں کو حکومت کا تختہ الٹنے اور چھوٹے اسلحے، بارودی مواد اور زمین سے فضا میں مار کرنے والے میزائلوں سے حملے کے جرم میں موت کی سزا سنائی گئی ہے۔

اخبار نے مزید کہا ہے کہ عوامیہ کے لوگوں کو سکیورٹی اہلکاروں پر حملے اور ہمسایہ ملک بحرین میں مداخلت کرنے کے الزام میں موت کی سزا سنائی گئی ہے۔

قطیف میں 2011 سے اہل تشیع افراد سعودی حکومت کے خلاف مظاہرے کر رہے ہیں۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل کا کہنا ہے کہ سعودی عرب میں جن افراد کو فوری طور پر سزائے موت دیے جانے کا خدشہ ہے ان میں عوامیہ سے تعلق رکھنے والے چھ شیعہ بھی شامل ہیں جنھیں غیر منصفانہ مقدمے چلا کر مجرم قرار دیا گیا۔

تنظیم کے ایک ڈائریکٹر جیمز لنچ کا کہنا ہے ’یہ بات واضح ہے کہ سعودی عرب کے حکام انسداد دہشت گردی کی آر میں سیاسی بدلے لے رہی ہے۔‘

ان کا کہنا ہے کہ جن چھ افراد کو سزائیں سنائی گئی ہیں ان میں سے تین کو جب گرفتار کیا گیا تھا وہ اس وقت نابالغ تھے اور ان پر تشدد کر کے اقبال جرم کرایا گیا ہے۔

ان تین افراد میں عبداللہ الظہیر اور حسین المرہون کے علاوہ علی النمر بھی شامل ہیں جن کے مقدمے پر دنیا بھر میں تنقید کی گئی تھی۔

اسی بارے میں