امریکہ میں فوجی اکیڈمی میں ’تکیوں سے لڑائی‘ بند

تصویر کے کاپی رائٹ West Point
Image caption عسکری اکیڈمی میں تکیوں سے کی جانے والی لڑائی سنہ 1897 کے بعد سے ہر سال منعقد کی جاتی ہے

امریکہ میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کی نامور فوجی اکیڈمی میں موسم گرما کے تربیتی پروگرام کے اختتام کے موقع پر تکیوں سے ہونے والی لڑائی کو بند کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

گذشتہ اگست کے اختتام پر ہونے والی اسی قسم کی لڑائی میں کم سے کم 30 فوجی زخمی ہو گئے تھے۔

تکیوں کی لڑائی میں 30 امریکی فوجی زخمی

اطلاعات کے مطابق تکیوں میں موجود کسی سخت چیز کی موجودگی کی وجہ سے اس لڑائی کے دوران کم سے کم 24 فوجی بے ہوش ہو گئے تھے۔

ویسٹ پوائنٹ فوجی اکیڈمی کے سپرنٹنڈنٹ لیفٹیننٹ جنرل رابرٹ ایل کاسلن کا کہنا ہے کہ ’اکیڈمی ان لڑائیوں میں شامل کیڈٹس کے خلاف غیر مخصوص اضباطی کارروائی کر رہی ہے۔‘

نیو یارک ٹائمز کے مطابق رابرٹ ایل کاسلن کا کہنا تھا کہ ’اس کارروائی کا سامنا کرنے والوں میں اعلیٰ فوجی اہلکار اور کیڈٹس شامل ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption موسم گرما میں تربیتی پروگرام کے اختتام پر رات میں تفریحی مقصد کے لیے یہ پروگرام منعقد کیا جاتا ہے

جنرل کاسلن نے ان اہلکاروں کے رینکس اور نام تو نہیں بتائے تاہم ان کا کہنا تھا کہ ’میں واضح پیغام دینا چاہتا ہوں کہ اس قسم کا رویہ برداشت نہیں کیا جائے گا۔

واضح رہے کہ اگست میں ہونے والی لڑائی کے دوران ایک فوجی کی ناک کی ہڈی ٹوٹی جبکہ کئی فوجیوں کے کندھے اتر گئے تھے۔

اس سے قبل امریکہ میں عسکری تربیت گاہ ویسٹ پوائنٹ اکیڈمی کا کہنا تھا کہ کوئی بھی فوجی شدید زخمی نہیں ہوا تھا اور تمام کیڈٹ اپنی ڈیوٹی سر انجام دے رہے ہیں۔

موسم گرما میں تربیتی پروگرام کے اختتام پر رات میں تفریحی مقصد کے لیے یہ پروگرام منعقد کیا جاتا ہے لیکن رواں سال ہونے والا یہ مقابلہ ضرورت سے زیادہ ہی پرجوش ہو گیا جس میں تکیوں کے اندر سخت چیزیں جیسے ہیلمٹ وغیرہ بھر دی گئی تھیں۔

عسکری اکیڈمی میں تکیوں سے کی جانے والی لڑائی سنہ 1897 کے بعد سے ہر سال منعقد کی جاتی ہے۔

اسی بارے میں