عراق کی جانب سے ترکی کے خلاف اقوامِ متحدہ جانے کی دھمکی

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption اگر ترکی نے اپنی فوجیں 48 گھنٹوں میں نہ ہٹائی گئیں تو عراق اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل تک رسائی حاصل کر سکتا ہے

عراق نے ترکی کو دھمکی دی ہےکہ اگر اس نے موصل کے قریب تعینات اپنے فوجیوں کو 48 گھنٹوں کے اندر اندر نہ ہٹایا تو وہ اس کے خلاف اقوامِ متحدہ تک رسائی حاصل کرے گا۔

بغداد کا کہنا ہے کہ فوجیوں کی تعیناتی اس کی مشاورت کے بغیر ہوئی تھی اور یہ اس کی قومی سالمیت کی خلاف ورزی ہے۔

امریکہ کا عراق میں فوجی دستے تعینات کرنے کا اعلان

’شام یا عراق میں آسٹریلوی فوج بھیجنے کا ارداہ نہیں‘

عراق کے وزیراعظم حیدر العابدی کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ عراق کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ خود کو میسر تمام آپشنز استعمال کرے۔ انھوں نے کہا کہ اگر یہ فوجیں 48 گھنٹوں میں نہ ہٹائی گئیں تو عراق اقوامِ متحدہ کی سلامتی کونسل تک رسائی حاصل کر سکتا ہے۔

ترک وزیراعظم نے ایک خط میں اپنے عراقی ہم منصب سے وعدہ کیا تھا کہ وہ مزید فوجی اس علاقے میں تعینات نہیں کریں گے تاہم انھوں نے پہلے سے تعینات فوجیوں کو ہٹانے پر رضامندی نہیں دی تھی۔

عراقی وزارتِ خارجہ نے ترک سفیر کو طلب کر کے ان سے مطالبہ کیا ہے کہ ترکی شمالی شہر موصل کے قریبی علاقے سے اپنے فوجی واپس بلائے۔

تاہم ترکی نے کہا ہے کہ باشیقہ قصبے کے قریب تقریباً 150 فوجی عراقی کرد فورسز کو دولتِ اسلامیہ سے لڑنے کی تربیت دینے کے لیے تعینات کیے ہیں۔

ترک وزیراعظم نے بیان میں کہا ہے کہ یہ فوجوں کی معمول کی تعیناتی ہے۔

انھوں نے یہ بھی کہا ہے کہ موصل کے قریب یہ تربیتی کیمپ عراق سے مشاورت کے بعد ہی گذشتہ سال قائم کیا گیا تھا۔

ترکی کا کہنا ہے کہ یہ کیمپ ان مقامی رضاکاروں کی تربیت کے لیے ہے جو دہشت گردی کے خلاف لڑ رہے ہیں۔

موصل گذشتہ سال سے خود کو دولت اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم کے قبضے میں ہے۔

Image caption عراقی حکومت کئی بار موصل پر دوبارہ قبضہ حاصل کرنے کی کوشش کر چکی ہے

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ عراق میں خودمختار کرد علاقوں کے ساتھ ترکی کے اچھے تعلقات ہیں لیکن ترکی شامی کرد گروہوں کو مخالفین کی نظر سے دیکھتا ہے۔

عراقی حکومت کئی بار موصل پر دوبارہ قبضہ حاصل کرنے کی کوشش کر چکی ہے۔

رواں ہفتے میں پہلے برطانیہ کی دارالعوام نے شام میں دولت اسلامیہ کے خلاف فضائی حملوں کی منظوری دی اور اس کے بعد جرمنی کی پارلیمان نے بھی شدت پسند تنظیم کے خلاف اتحادیوں کی فوجی مدد کرنے کی منظوری دے دی ہے۔

واضح رہے کہ گذشتہ دنوں امریکہ کے وزیر دفاع ایشٹن کارٹر کا کہنا تھا کہ امریکہ نام نہاد شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ پر دباؤ بڑھانے کے لیےخصوصی فوجی دستے عراق میں تعینات کرے گا۔

اسی بارے میں