یمن کے شہر عدن کے گورنر حملے میں ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption عدن میں سرکاری عمارتوں کو پہلے بھی نشانہ بنایا گیا ہے

یمن میں سکیورٹی فورسز کا کہنا ہے کہ عدن شہر کے گورنر ایک حملے کے دوران ہلاک ہو گئے ہیں۔

یمن کے جنوبی شہر عدن میں ہوٹل پر راکٹ حملہ

’عدن کے پناہ گزینوں کے خلاف سنگین مظالم کا ارتکاب کیا گیا‘

خود کو دولت اسلامیہ کہنے والی شدت پسند تنظیم نے اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔

خبر رساں ادارے رؤئٹرز کے مطابق جعفر محمد سعد کو لے جانے والے قافلے پر راکٹ پروپیلڈ گرینڈے ساتھ حملہ کیا گیا۔

شمالی یمن کے حوثی باغیوں نے دارالحکومت صنعا سمیت کے بیشتر علاقوں پر قبضہ کر رکھا ہے۔

اس سال کے آغاز میں حکومتی فورسز اور سعودی قیادت میں بین الاقوامی اتحاد نے عدن پر دوبارہ قبضہ حاصل کیا تھا۔

سکیورٹی فورسز کے مطابق گورنر کے قافلے میں موجود دیگر لوگ بھی ہلاک ہوئے ہیں۔

اقوام متحدہ کی کوشش ہے کہ فریقین میں اس ماہ مذاکرات کا انعقاد کی جاسکے۔

سنیچر کو حملہ آووروں نے انسداد دہشت گردی کے ایک جج کو ان کے دو بیٹوں سمیت گولی مار کر ہلاک کر دیا تھا جبکہ دوسرے حملے میں ایک فوجی انٹیلیجنس اہلکار کو ہلاک کیا گیا۔

واضح رہے کہ یمن میں جاری خانے جنگی کے دوران شدت پسند تنظیم دولتِ اسلامیہ نے اپنے قدم جمائے ہیں۔

اسی بارے میں