فرانس میں فوجی اہلکاروں پرگاڑی چھڑہانے والا ڈرائیور فائرنگ سے زخمی

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption پیرس میں 13 نومبر کو شدت پسندوں کے حملے کے بعد سے فرانس میں سکیورٹی ہائی الرٹ ہے

فرانس میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے جنوب مشرقی علاقے میں مسجد کے باہر تعینات فوجی اہلکاروں پر گاڑی چھڑہانے والے ایک کارڈرایئور کو گولی ماری گئی جو اُس کی ٹانگ میں لگی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ کار ڈارئیور نے ویلنیس میں مسجد کی حفاظت پر مامور چار میں سے ایک فوجی اہلکار کو زخمی کیا ہے۔

حکام کا کہنا ہے کارڈرائیور زخمی ہے لیکن اُس کی حالت خطرے سے باہر ہے۔

پیرس میں 13 نومبر کو شدت پسندوں کے حملے کے بعد سے فرانس میں سکیورٹی ہائی الرٹ ہے۔

یہ حملہ اُس وقت جب مسجد میں نماز جاری تھی اور کئی افراد مسجد کے باہر بھی موجود تھے۔ تاحال اس حملے کے وجوہات معلوم نہیں ہو سکی ہیں۔

پولیس کا کہنا ہے کہ گاڑی کے ڈرائیور نے دو مرتبہ اُن پر کار چھڑہانے کی کوشش کی اور اُسے اُس وقت گولی ماری گئی جب وہ تیسری بار اُن کی جانب آنے کے لیے اپنی گاڑی ریورس کر رہا تھا۔

گاڑی کےڈرائیور کی عمر 29 سال ہے۔

ملک کے وزیر دفاع اور وزیر اطلاعات کا کہنا ہے کہ سپاہیوں نے اپنے دفاع میں گولی چلائی ہے۔

فرانس میں سکیورٹی کے لیے ملک بھر میں ایک لاکھ سے زائد سکیورٹی اہلکار حساس مقامات پر تعینات ہیں۔

اسی بارے میں