تل ابیب میں فائرنگ، دو افراد ہلاک سات زخمی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption پولیس علاقے میں مسلح حملہ آور کو تلاش کر رہی ہے

اسرائیل کی پولیس کا کہنا ہے کہ وسطی تل ابیب میں ایک مسلح شخص کی فائرنگ کے نتیجے میں دو افراد ہلاک اور کم سے کم سات افراد زخمی ہوگئے ہیں۔

پولیس ترجمان مکی روزینفیلڈ کا کہنا ہے کہ پولیس اہلکار تل ابیب کے علاقے میں مشتبہ شخص کو تلاش کر رہے ہیں۔

Image caption چار افراد شدید زخمی ہیں: پولیس

یہ واقعہ ڈیزنگوف سٹریٹ میں ایک بار میں پیش آیا ہے۔ تاہم ابھی تک فائرنگ کی اصل وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔

ایک عینی شاہد نے اسرائیلی ٹیلی ویژن کو بتایا کہ حملہ آور نوجوان تھا اور اس کے پاس رائفل تھی۔

پولیس کے ترجمان میکی روزن فیلڈ نے بی بی سی کو بتایا کہ ابھی یہ واضح نہیں ہے کہ اس حملے کا پس منظر کیا تھا؟ کیا یہ دہشت گردی تھی یا مجرمانہ کارروائی؟

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption کسی بھی حملے کے حوالے سے خاص وارننگ نہیں تھی: پولیس

انھوں نے بتایا کہ چار افراد شدید زخمی ہیں۔

پولیس کے ترجمان میکی روزن فیلڈ کا کہنا ہے کہ تل ابیب کے مختلف علاقوں میں انسدادِ دہشت گردی اور خفیہ اداروں کے یونٹس کام کر رہے تھے اور کسی بھی حملے کے حوالے سے خاص وارننگ نہیں تھی۔

تاہم دوسری جانب یروشلم پوسٹ نے شہر کے میئر کے حوالے سے خبر دی ہے کہ انھوں نے جائے وقوعہ پر صحافیوں سے گفتگو میں کہا ہے کہ ’یہ بظاہر قوم پرستی کے جذبات سے متاثر ہو کیا جانے والا دہشت گردی کا حملہ ہے۔‘

Image caption 23دسمبر کو 21 اسرائیلیوں کی ہلاکت کا واقعہ پیش آیا تھا

23دسمبر کو 21 اسرائیلیوں کی ہلاکت کا واقعہ پیش آیا جن میں سے زیادہ تر کو فلسطینیوں کی جانب سے چاقو کے وار اور گولیاں مار کر ہلاک کیا گیا تھا۔

کم سے کم 131 فلسطینی بھی ہلاک ہوئے ہیں جن میں آدھے سے زیادہ کے بارے میں اسرائیل کا کہنا ہے کہ وہ حملہ آور تھے جبکہ دیگر اسرائیلی فورسز کے ساتھ جھڑپوں میں ہلاک ہوئے۔

Image caption رپورٹس میں یہ خیال ظاہر کیا جا رہا ہے کہ بار اور کیفے کو نشانہ بنایا گیا

روزینفیلڈ نے ٹویٹر پر کہا ہے کہ ’یہ جاننے کے لیے تحقیقات کی جا رہی ہیں کہ آیا یہ مجرمانہ حملہ تھا یا دہشت گردوں کا حملہ تھا۔‘

اسی بارے میں