البغدادی نام ہونے پر ٹوئٹر اکاونٹ معطل

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption اس ساری صورتحال کے حوالے سے ٹوئٹر کی جانب سے کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے

عرب سپرنگ کے ایک سرگرم کارکن کا کہنا ہے کہ غلط فہمی کے باعث سماجی رابطوں کی سائٹ ٹوئٹر نے ان کا اکاونٹ معطل کر دیا تھا کیونکہ ان کا خاندانی نام دولتِ اسلامیہ کے سربراہ کے نام سے ملتا ہے۔

اید البغدادی کا اکاونٹ تقریباً آدھے گھنٹے تک معطل رہا۔

اس سے قبل انڈونیشیا کا ایک اخبار اور امریکی اخبار نیویارک پوسٹ بھی دولتِ اسلامیہ کے سربراہ کے طور پر ان کی غلط شناخت کر چکے ہیں۔

اُن کے ٹوئٹر پر 70 ہزار سے زیادہ فالورز ہیں اور اید البغدادی ٹوئٹر پر اکثر اپنے پیغامات کے ذریعے دولتِ اسلامیہ پر تنقید کرتے رہتے ہیں۔

اس ساری صورتحال کے حوالے سے ٹوئٹر کی جانب سے کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے۔

خیال رہے کے ٹوئٹر نے حال ہی میں غیر مہذب اور نفرت انگیز رویے سے متعلق اپنے قوائد و ضوابط میں تبدیلی کی ہے۔

ٹوئٹر پر یہ تنقید کی جاتی رہی ہے کہ وہ اپنی سائٹ پر دولتِ اسلامیہ کے پراپیگنڈے کو روکنے میں ناکام رہا ہے۔

Image caption انھوں نے ٹوئٹر پر نسل پرستی کا الزام لگایا ہے

کمپنی کا کہنا ہے کہ اس کی سائٹ پر لوگوں کو دھمکانے اور دہشت گردی کو فروغ دینے کی اجازت نہیں ہے۔

اید البغدادی نے بی بی سی کو بتایا کہ انھیں ٹوئٹر کی جانب سے پیغام ملا تھا کہ وہ سائٹ کے اصولوں کی خلاف ورزی کے مرتکب ہوئے ہیں لیکن اس کے علاوہ کوئی تفصیل انھیں نہیں بتائی گئی۔

انھوں نے ٹوئٹر پر نسل پرستی کا الزام لگایا ہے۔

البغدادی کا اپنی ایک ٹویٹ میں کہنا تھا کہ ’ میرا نہیں خیال کہ کوئی بھی ایسا عرب ملک ہو جہاں البغدادی نام کا کوئی خاندان نہ رہتا ہو۔‘

ان کے مطابق اس حالیہ واقعے سے ٹوئٹر کے سکیورٹی پراسس پر سوالیہ نشان اٹھتے ہیں اور لوگوں کے اکاونٹ معطل کرنے کے عمل کو مزید شفاف بنانے کی ضرورت ہے۔

اسی بارے میں