پیرس حملوں کے مشتبہ حملہ آور کا ’وکیل سے رابطہ‘

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اس تصویر میں بائیں جانب صالح عبداسلام ایک پیٹرول سٹیشن پر ساتھی کے ہمراہ موجود ہیں

ایک غیر تصدیق شدہ اطلاع کے مطابق پیرس حملوں کے مشتبہ حملہ آور صالح عبدالسلام نے اپنے وکیل سے رابطہ کیا ہے۔

13 نومبر کو پیرس حملوں کے چند ہی گھنٹوں کے بعد صالح عبدالسلام بیلجیئم مفرور ہو گئے تھے۔

خبر رساں ادارے بیلگا نے ایک قابلِ اعتماد ذریعے کے حوالے سے خبر دی ہے کہ مفرور مشتبہ حملہ آور صالح نے اپنے وکیل سوین مارے سے رابطہ کیا تھا۔

تاہم وکیل سوین میرے نے اس پر بات کرنے سے انکار کر دیا ہے جبکہ فیڈرل پراسیکیوٹر نے اسے ’صرف ایک افواہ‘ قرار دیا ہے۔

ادھر پیرس میں پراسیکیوٹر نے سینٹ ڈینس کے فلیٹ میں خود کش حملہ کرنے والے کی شناخت چیکب اقروح کے نام سے کی ہے اور کہا ہے کہ ان کا حملہ آوروں کے ساتھ تعلق تھا۔

اقروح کے بارے میں بتایا گیا ہے کہ ان کی عمر 26 سال تھی اور وہ بیلجیئم اور موروکو کی شہریت کے حامل تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption بیلجیئم کی پولیس کو صالح کی تلاش میں کوئی کامیابی نہیں مل سکی ہے

بیلجیئم میں میڈیا سے گفتگو میں عبدالسلام کے وکیل نے کہا کہ نہ تو وہ اس رابطے کی تصدیق کر سکتے ہیں اور نہ ہی اس سے انکار کر سکتے ہیں۔ جبکہ خبر رساں ادارے بیگا نے یہ نہیں بتایا کہ مفرور ہونے والے مبینہ حملہ آور نے اپنے وکیل سے کب رابطہ کیا تھا۔

بیلجیئم کے ٹی وی پر خبروں میں وکیل کی گفتگو کو بھی دکھایا گیا جس میں انھوں نے کہا کہ ’میں بات نہیں کرسکتا اور نہ کرنا چاہتا ہوں۔‘

خیال رہے سے گذشتہ ماہ بھی انھوں نے بیلجیئم کے ایک اخبار میں بھی اسی قسم کے شائع ہونے والے دعوے کی تردید کی تھی۔

وکیل سوین میرے کہتے ہیں کہ وہ مفرور مشتبہ حملہ آور کی نمایندگی کرنے کے لیے تیار ہوں گے جن کے بارے میں یہ خیال ظاہر کیا جا رہا ہے کہ انھوں نے فرانس میں تین خودکش حملہ آوروں کو حملے کے مقام تک پہنچایا تھا۔

رواں ہفتے بیلجیئم کی سرحد کے قریب پیرس کے شمال میں واقع ایک پیٹرول پمپ کے سی سی ٹی وی کیمرے سے ملنے والی فوٹیج میں بھی عبدالسلام کو دیکھا جا سکتا ہے۔

انھیں حمزہ عطاؤ کے ساتھ دیکھا گیا جو ان دو افراد میں سے ایک ہیں جنھوں نے انھیں بیلجیئم پہنچایا تھا۔

گذشتہ روز پیرس کے پراسیکیوٹر نے کہا تھا کہ انھوں نے ان تین رہائش گاہوں کا پتہ لگایا ہے جنھیں پیرس حملوں میں ملوث افراد نے استعمال کیا۔

تفتیش کاروں نے بھی چارلی روئے کے علاقے میں موجود فلیٹ میں پیرس حملوں کے ماسٹر مائنڈ احمد اباعود اور بلال ہادفی کے انگلیوں کے نشانات کی شناخت کی ہے۔

اسی بارے میں