تیل کی قیمتوں میں اضافےسے ایشیائی بازار حصص میں بہتری

تصویر کے کاپی رائٹ epa
Image caption تیل کی گرتی قیمتوں کے باعث گذشتہ دو روز سے ایشیا کی مارکیٹس پر منفی اثرات پڑے

تیل کی قیمتوں میں اضافے سے ایشیا بھر میں سرمایہ کاروں کا اعتماد کچھ بحال ہوا ہے اور توانائی کے حصص میں اضافہ ہوا ہے۔

برینٹ خام تیل کی قیمت میں 8.3 فیصد اضافہ ہوا ہے جبکہ ویسٹ ٹیکسس خام تیل کی قیمت میں 9.4 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

آسٹریلیا کی سٹاک انڈیکس میں توانائی سے تعلق رکھنے والے حصص میں اضافے کے باعث 2.13 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

آسٹریلیا کی سٹاک ایکسچینج میں ریو ٹنٹو کے حصص میں نو فیصد، بی ایچ پی کے حصص میں آٹھ فیصد اور سینٹوس کے شیئرز میں 13 فیصد اضافہ ہوا۔

واضح رہے کہ تیل کی گرتی قیمتوں کے باعث گذشتہ دو روز سے ایشیا کی مارکیٹس پر منفی اثرات پڑے۔

دوسری جانب ہانگ کانگ سٹاک ایکسچینج میں 1.16 فیصد جبکہ شنگھائی ایکسچینج میں 1.3 فیصد تیزی آئی۔

اسی طرح جنوبی کوریا کی ایکسچینج میں 1.26 فیصد اضافہ ہوا۔

خیال رہے کہ رواں ماہ عالمی منڈی میں تیل کی قیمت 28 ڈالر فی بیرل سے بھی نیچے آ گئی تھی۔

اس سے قبل اوپیک کے سیکریٹری جنرل عبداللہ البدری نے کہا تھا کہ اوپیک اور تیل پیدا کرنے والے ممالک کو قیمتوں میں اضافے کے لیے طلب سے زیادہ پیدوار کے مسئلے سے نمٹنے کی ضرورت ہے۔

انھوں نے لندن میں ایک کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا ’بازار کو ضرورت ہے کہ زیادہ سٹاک کے مسئلے کو حل کرے، گذشتہ رجحانات سے اندازہ ہوتا ہے کہ ضرورت سے زیادہ سٹاک کم ہوتا ہے تو قیمتوں میں اضافہ شروع ہو جاتا ہے۔‘

اسی بارے میں