فلپائن کی سابق خاتون اول کے زیورات کی نیلامی

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption حکام ان زیورات کی جلد از جلد نیلامی چاہتے ہیں

فلپائن کی سابق خاتون اول امیلڈا مارکوس کے دو کروڑ ڈالر سے زائد مالیت کے زیورات نیلامی کے لیے پیش کیے جائیں گے۔

یہ زیورات حکومت نے سنہ 1986 میں ان کے خاوند فرڈیننڈ مارکوس کو اقتدار سے ہٹانے کے بعد اپنی تحویل میں لے لیے تھے۔

امیلڈا مارکوس اس نیلامی کو رکوانا چاہتی ہیں جبکہ فلپائن میں حکام ان زیورات کی جلد از جلد نیلامی کرنا چاہتے ہیں جن میں 25 قیراط کا ایک گلابی ہیرا بھی شامل ہیں۔

خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ حکام ان زیورات کی جلد از جلد نیلامی اس لیے چاہتے ہیں مارکوس جوڑے کے بیٹے فرڈیننڈ ماکورس جونیئر اگر انتخابات میں کامیابی کے بعد نائب صدر بن گئے تو کہیں وہ یہ نیلامی رکوا نہ دیں۔

کمشنر اینڈیو ڈی کاسترو نے خبررساں ادارے اے ایف پی کو بتایا کہ صدارتی کمیشن برائے گڈ گورننس جو مارکوس خاندان اور ان کے حامیوں کی جانب سے لوٹی ہوئی دولت بازیاب کرانے کے لیے بنایا گیا ہے، اس نے ایک ویب سائٹ بھی لانچ کی ہے جس کا مقصد مارکوس خاندان کی ’غیرقانونی دولت‘ سے حاصل کیے گئے فن کے سینکڑوں شاہکار نمونوں کی بازیابی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

خیال رہے کہ فلپائن میں نائب صدر کے لیے انتخابات مئی میں منعقد ہوں گے اور اس میں فرڈیننڈ مارکوس کے بیٹے نمایاں امیدوار ہیں۔

ڈی کاسترو کا کہنا ہے کہ حکام کو امید ہے کہ صدر بینگنو آکوئینو کے جون میں اقتدار سے علیحدہ ہونے اور نئے صدر اور نائب صدر کے اقتدار سنبھالنے سے پہلے بیشتر زیورات کی نیلامی کر دی جائے گی۔

’جون 2016 میں جو کوئی بھی اقتدار سنبھالتا ہے ہمارا فرض ہے کہ جلد از جلد ان زیورات کو نیلام کر دیا جائے۔‘

اسی بارے میں