کیری کا پاکستان کو ایف 16 طیاروں کی فروخت کا دفاع

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption امریکی دفترِ خارجہ نے رواں ماہ ہی پاکستان کے لیے تقریبا 86 کروڑ ڈالر کا بجٹ منظور کیا ہے جس میں سے 27 کروڑ ڈالر فوجی سازوسامان کے لیے رکھےگئے ہیں

امریکی وزیرِ خارجہ جان کیری نے پاکستان کو آٹھ ایف 16 لڑاکا طيارے فروخت کرنے کے فیصلے کا دفاع کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگرچہ یہ ایک پیچیدہ معاملہ ہے تاہم پاکستان امریکہ کا اتحادی ملک ہے اور اس کی فوج نے دہشت گردی کے خلاف جنگ میں کافی ساتھ دیا ہے۔

کیری نے یہ بیان امریکی سینیٹ کی خارجہ معاملات کی کمیٹی کے سوالات کے جواب میں دیا ہے۔

کمیٹی کے سربراہ سینیٹر باب كاركر پاکستان کو یہ طيارے بیچنے کے خلاف ہیں اور انھوں نے اسی ماہ جان کیری کو ایک خط لکھ کر کہا تھا کہ وہ اوباما انتظاميہ کو امریکی عوام کا پیسہ پاکستان پر خرچ نہیں کرنے دیا جائے گا۔

منگل کو کمیٹی کے اجلاس کے دوران سینیٹر كاركر نے پاکستان پر دوہری پالیسی اپنانے کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ وہ حال ہی میں افغانستان کے دورے سے واپس آئے ہیں اور وہاں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ پاکستان اب بھی طالبان، حقانی نیٹ ورک اور القاعدہ کو پناہ دے رہا ہے۔

ان کا کہنا تھا، ’وہ بیشک یہ طیارے دیں اور کسی اور کمپنی کی جگہ امریکی کمپنی سے خریدیں۔ لیکن وہ یہ بھی چاہتے ہیں کہ اس میں امریکی عوام کے ٹیکس کے پیسے سے انھیں چھوٹ ملے۔‘

كاركر کا کہنا تھا کہ خارجہ معاملات کی کمیٹی کے سربراہ کی حیثیت سے وہ امریکی عوام کا ایک پیسہ بھی اس پر خرچ کرنے کے حق میں نہیں ہیں۔

اس کے جواب میں جان کیری کا کہنا تھا کہ حال ہی میں پاکستان کے وزیر اعظم نواز شریف کے ساتھ ہوئی ملاقات کے دوران وہ واضح کر چکے ہیں کہ پاکستان کو تمام شدت پسندوں کہ خلاف بلا تمیز كارروائي کرنی ہوگی۔

کیری کا کہنا تھا، ’پاکستانی فوج دہشت گردی کے خلاف کافی ساتھ دے رہی ہے اور ان کے ہزاروں لوگ اس جنگ میں مارے گئے ہیں۔ اس کے علاوہ پاکستان کے ایک لاکھ 60 ہزار سے زیادہ فوجی ملک کے مغربی علاقوں میں بڑی فوجی کارروائی کر رہے ہیں جس سے حقانی نیٹ ورک کو ان ٹھکانوں کو چھوڑنا پڑا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption آٹھ ایف 16 طیاروں اور اس سے منسلک سازوسامان کی قیمت تقریباً 70 کروڑ ڈالر ہے

ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ یہ پورا معاملہ کافی پیچیدہ ہے اور وہاں کچھ اور طاقتیں بھی کام کر رہی ہیں جن کے بارے میں وہ اس فورم پر بات نہیں کر سکتے۔

امریکی دفترِ خارجہ نے رواں ماہ ہی پاکستان کے لیے تقریبا 86 کروڑ ڈالر کا بجٹ منظور کیا ہے جس میں سے 27 کروڑ ڈالر فوجی سازوسامان کے لیے رکھےگئے ہیں۔

امریکی محکمۂ دفاع کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق ان آٹھ ایف 16 طیاروں اور اس سے منسلک سازوسامان کی قیمت تقریباً 70 کروڑ ڈالر ہے یعنی اگر یہ طیارے فروخت کیے جاتے ہیں تو اس مد میں پاکستان 43 کروڑ ڈالر خود ادا کرے گا۔

امریکی کانگریس کے پاس اس سودے کی منظوری دینے یا اسے رد کرنے کے لیے 30 دن کا وقت ہے۔

بھارت نے بھی اس سودے پر خاصی تنقید کی ہے اور دہلی میں امریکی سفیر کو بلا کر اپنی ناراضگی ظاہر کی ہے۔

تاہم پینٹاگون نے کہا ہے کہ بھارت کو اس سودے سے کسی طرح کی تشویش نہیں ہونی چاہیے کیونکہ اوباما انتظامیہ نے خطے کے حالات کا جائزہ لینے کے بعد ہی یہ فیصلہ کیا ہے۔

پینٹاگون کے ترجمان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکہ بھارت اور پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو الگ الگ نظر سے دیكھتا ہے۔

اسی بارے میں