’طالبان رضامند نہ ہوئے تو تشدد میں تیزی کے لیے تیار رہنا ہو گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ bbc
Image caption امریکہ اور افغانستان کے صدر اشرف غنی بھی یہی چاہتے ہیں کہ مذاكرات بحال ہوں

امریکہ نے کہا ہے کہ اگر افغان طالبان کے ساتھ مذاکرات کا عمل جلد از جلد شروع نہ ہوا تو آنے والے موسم بہار اور پھر موسمِ گرما میں حالات کافی خراب ہو سکتے ہیں جس کے لیے امریکہ اور افغان سکیورٹی فورسز کو خود کو تیار کرنا ہو گا۔

امریکی دفترِ خارجہ کے ترجمان جان کربی نے یہ بات پیر کو واشنگٹن میں صحافیوں کو بریفنگ دیتے ہوئی کہی۔

افغان حکومت اور طالبان کے مابین براہ راست مذاکرات آئندہ ماہ متوقع تھے تاہم افغان طالبان نے حال ہی میں کہا ہے کہ جب تک ملک سے غیر ملکی افواج کا انخلا نہیں ہوگا تب تک حکومت سے امن مذاکرات نہیں کیے جائیں گے۔

پاکستانی وزیر اعظم کے مشیر برائے امور خارجہ سرتاج عزیز نے بھی حال ہی میں دورۂ امریکہ کے دوران کہا تھا کہ اس بار اگر بات چیت کامیاب نہ ہوئی تو موسم گرما میں تشدد میں خاصا اضافہ ہو سکتا ہے۔

جان کربی کا کہنا تھا کہ پاکستان اور امریکہ اس معاملے میں ایک ہی رائے رکھتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا: ’اگر معاہدے کی کوشش ناكام رہتی ہے اور طالبان بات چیت کے لیے رضامند نہیں ہوتے تو ہمیں اور افغان فوج کو آنے والے مہینوں میں تشدد میں تیزی کے لیے تیار رہنا ہو گا۔‘

ترجمان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکہ اور افغانستان کے صدر اشرف غنی بھی یہی چاہتے ہیں کہ مذاكرات بحال ہوں۔

جان کربی نے کہا کہ افغانستان میں طویل مدت امن و امان قائم کرنے کے لیے اس وقت اہم موقع ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اس معاملے پر تفصیلی بات ہوئی ہے کہ امریکہ چاہتا ہے کہ پاکستان اور افغانستان مل کر کام کریں۔

گذشتہ ہفتے امریکہ میں صدارتی انتخابات کے لیے جاری مہم کا حوالہ دیتے ہوئے امریکی محکمہ خارجہ کے ترجمان سے پوچھا گیا کہ کیا پاکستان کے جوہری ہتھیاروں کی حفاظت کے پیش نظر امریکہ کو افغانستان میں موجود رہنے کی ضرورت ہے؟

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption ایک تھنک ٹینک میں اپنی تقریر کے دوران پاکستان کے وزیراعظم کے مشیر برائے امورِ خارجہ سرتاج عزیز نے یہ بھی کہا تھا کہ پاکستان افغان طالبان پر دباؤ ڈالنے کی اہلیت رکھتا ہے کیونکہ وہ اپنی اور اپنے خاندان کی ضرورتوں کو پوری کرنے کے لیے پاکستان پر انحصار کرتے ہیں

اس کے جواب میں جان کربی نے کہا کہ فوجیوں کی تعداد بڑھانے کا فیصلہ ملک کا کمانڈر انچیف کرتا ہے اور صدر پہلے ہی وہاں موجود فوجیوں کی تعداد کو 9800 سے کچھ اور بڑھانے پر آمادہ ہیں۔

یہ غور طلب ہے کہ واشنگٹن میں ایک تھنک ٹینک میں اپنی تقریر کے دوران سرتاج عزیز نے یہ بھی کہا تھا کہپاکستان افغان طالبان پر دباؤ ڈالنے کی اہلیت رکھتا ہے کیونکہ وہ اپنی اور اپنے خاندان کی ضرورتوں کو پوری کرنے کے لیے پاکستان پر انحصار کرتے ہیں۔

سرتاج عزیز نے یہ بھی کہا تھا کہ افغان طالبان کے رہنما پاکستان میں ہیں اور انھیں بات چیت کے لیے راضی کرنے میں پاکستان اہم کردار ادا کر سکتا ہے۔

اس میں کافی ہنگامہ بھی مچا تھا کیونکہ یہ شاید پہلی بار تھا جب کسی پاکستانی اہلکار نے یہ کہا ہو کہ افغان طالبان پاکستان میں مقیم ہیں۔

اسی بارے میں