اتحادی حکومت کا لیبیا میں اقتدار میں آنے کا دعویٰ

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption لیبیا میں اب تک دو حکومتیں اقتدار کا دعویٰ کرتی رہی ہیں لیکن اب اقوام متحدہ کی ثالثی میں ایک اتحاد کی حکومت سازی کی کوشش جاری ہے

تیونس میں قائم اقوام متحدہ کی حمایت والی لیبیا کی صدارتی کونسل نے بین الاقوامی برادری سے اپیل کی ہے کہ وہ لیبیا میں حریف قوتوں سے معاملات ختم کر دیں۔

گذشتہ مہینے کونسل نے ایک اتحادی حکومت نامزد کی تھی لیکن کابینہ کی منظوری تاخیر کا شکار ہے۔

سنہ 2011 میں کرنل معمر قذافی کے زوال کے بعد سنہ 2014 سے لیبیا میں دو حکومتیں اقتدار حاصل کرنے کا دعویٰ کرتی رہی ہیں۔

تبروک میں مشرقی ایوان نمائندگان (ایچ او آر) ابھی تک اتحاد کی حکومت کی توثیق کرنے سے قاصر رہی ہے۔

سنیچر کو کونسل نے ایک بیان میں کہا کہ ایچ او آر کے اراکین کی اکثریت نے حکومت کی حمایت والی دستاویز پر دستخط کر دیے ہیں اور پولیٹیکل ڈائیلاگ ٹیم نے بھی اس کی حمایت کی ہے جس کا مطلب یہ ہوا کہ ’کام شروع کرنے کے لیے ہری جھنڈی دکھا دی گئی ہے۔‘

بہر حال اس سے قبل جمعرات کو لیبیا کی پولیٹیکل ڈائیلاگ ٹیم، جس میں لیبیا کی سیاسی شخصیات شامل ہیں، اور دونوں حریف پارلیمانوں کے بعض اراکین اس سمت میں راہ ہموار کرنے کے لیے تیار نظر نہیں آ رہے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption لیبیا تیل کے وسائل سے مالا مال ملک ہے

تیونس سے بی بی سی کے رانا جواد کا کہنا ہے کہ انھوں نے مجوزہ حکومت کے بارے میں جلدی ووٹنگ کرانے کی بات کہی تھی۔

صدارتی کونسل کو صدر قذافی کے بعد سے لیبیا میں خانہ جنگی کی صورت حال ختم کرنے کے لیے حکومت سازی کے لیے راہ ہموار کرنے کا کام دیا گیا ہے۔

لیکن تیونس میں قائم کونسل کو دونوں حکومتوں کے سخت گیر ایوان نمائندگان کی جانب سے سخت مزاحمت کا سامنا ہے۔ خیال رہے کہ اس کونسل کو عالمی سطح پر قبولیت حاصل ہے۔

دوسری جانب سیاسی اور سکیورٹی سطح پر ملک میں موجود خلا نےجنگجو تنظیم دولت اسلامیہ کو شمالی افریقی ملک میں اپنے قدم جمانے کا موقع فراہم کیا ہے اور یہ شہروں اور تیل کی تنصیبات پر حملے کر رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption کرنل معمر قذافی کے بعد سے ملک کی صورت حال غیر مستحکم ہے

کونسل کا قیام اقوام متحدہ کی ثالثی میں ایک معاہدے کے نتیجے میں دسمبر میں عمل میں آیا تھا۔ اس کی پہلی تجویز اختلاف کا شکار ہو گئی تھی کہ کون سینيئر سکیورٹی عہدہ سنبھالے گا۔

کونسل کے اراکین ابھی بھی لیبیا سے باہر کام کر رہے ہیں کیونکہ دارالحکومت تریپولی میں موجود دونوں متحارب حکومتیں اور ان کے حامی ملیشیا کسی سیاسی اتحاد کے خلاف ہیں۔

اسی بارے میں