میرک گارلینڈ امریکی سپریم کورٹ کے نئے جسٹس نامزد

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption نامزدگی کا اعلان کرتے ہوئے صدر اوباما نے جج گارلینڈ کو مثالی جج قرار دیا

امریکی براک اوباما نے ویٹیرن اپیلز کورٹ کے جج میرک گارلینڈ کو سپریم کورٹ کے جسٹس کے لیے نامزد کیا ہے۔

گذشتہ ماہ سپریم کورٹ کے ایک جج اینتونن سکالیا کے انتقال کے بعد یہ سیٹ خالی ہوگئی تھی۔

63 سالہ جج گارلینڈ کو اعتدال پسند شخصیت کے طور پر دیکھا جاتا ہے اورریپبلکن پارٹی کے کچھ سینیئر رہنما بھی ان کے معترف ہیں۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ کے نئے جسٹس کی نامزدگی کے لیے ضروری ہے کہ امریکی سینیٹ بھی اس کی توثیق کرے، تاہم موجودہ سینیٹ میں رپبلکن پارٹی کو اکثریت حاصل ہے۔

ریپبلکنز نے صدر سے مطالبہ کیا ہے کہ نئے جج کی تقرری کا معاملہ صدارتی انتخابات تک مؤخر کر دیا جائے۔

جسٹس سکالیا کے انتقال سے قبل امریکہ کی عدالتِ عظمیٰ میں قدامت پسند ججوں کو پانچ چار کی برتری حاصل تھی اور اس برتری کے طفیل سپریم کورٹ اب تک موسمیاتی تبدیلی اور تارکین وطن کی امریکہ میں آمد کے معاملات پر اوباما انتظامیہ کی کوششوں کو روکنے میں کامیاب رہی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption جج گارلینڈ واشنگٹن کی اپیلز کورٹ کے چیف جج اور سابق پراسیکوٹر رہ چکے ہیں

واشنگٹن میں وائٹ ہاؤس روز گارڈن میں نامزدگی کا اعلان کرتے ہوئے صدر اوباما نے جج گارلینڈ کو مثالی جج قرار دیا۔ ۔

صدر اوباما نے سینیٹ سے جج گارلینڈ کی حمایت کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ’وہ اس کام کے لیے درست شخص ہیں۔ وہ تصدیق کے مستحق ہیں۔‘

جج گارلینڈ واشنگٹن کی اپیلز کورٹ کے چیف جج اور سابق پراسیکوٹر رہ چکے ہیں۔ صدر اوباما کا کہنا ہے کہ انھیں ڈیموکریٹس اور ریپبلکنز دونوں کا حمایت حاصل ہے۔

جج گارلینڈ کا اپنی نامزدگی کے حوالے سے کہنا ہے کہ یہ ’میری زندگی کا سب سے بڑا اعزاز‘ ہے۔

جج گارلینڈ سنہ 1997 میں ڈیموکریٹ صدر بل کلنٹن کی جانب سے تعینات کیے گئے تھے اور سینیٹ میں 23-76 ووٹوں سے اس کی توثیق ہوئی تھی۔ اس سے قبل وہ کلنٹن انتظامیہ میں شعبہ انصاف سے وابستہ رہے تھے۔

اسی بارے میں