پلمائرہ میں ’دولت اسلامیہ‘ کے خلاف روسی کارروائیوں میں تیزی

تصویر کے کاپی رائٹ Alexander Zemlianichenko
Image caption لیفٹیننٹ جنرل سرگئی ردسکوئی نے نیوز کانفرنس کے دوران فضائی کارروائی کی ویڈیو بھی دکھائی

روس نے کہا ہے کہ اس کے جنگی طیارے دن میں 25 مرتبہ تک شام کے شہر پلمائرہ کے قریب فضائی حملے کر رہے ہیں تاکہ شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کو بے دخل کرنے کی شامی فوجوں کی کوششوں میں مدد مل سکے۔

وزیردفاع کے ترجمان لیفٹیننٹ جنرل سرگئی ردسکوئی کا کہنا تھا کہ شامی فوج یہاں دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں کو شکست دینے کے لیے تیار ہے۔

یہ حملے صدر ولادی میر پوتن کی جانب سے شام سے روسی فوج کے بڑے حصے کے انخلا کے اعلان کے چند دن بعد کیے گئے ہیں۔

ماسکو میں جنرل ردسکوئی نے صحافیوں کو بتایا کہ شامی فوج نے حلب کے قریب اہم پہاڑی چوٹیوں پر قبضہ کر لیا ہے اور دولت اسلامیہ کے قبضے میں شہر کو ملانے والے راستوں کی رسد بند کر دی ہے۔

خیال رہے کہ دولت اسلامیہ نے گذشتہ سال مئی میں قدیم شہر پلمائرہ پر قبضہ کر لیا تھا۔

اس وقت نے شدت پسند تنظیم کی جانب سے عالمی ورثہ قرار دیے جانے والی قدیم عبادگاہیں، ستون اور مجسمے تباہ کیے ہیں۔

دوسری جانب دولت اسلامیہ نے جمعے کو دعویٰ کیا ہے کہ اس نے پلمائرہ کے قریب لڑائی کے دوران پانچ روسی فوجیوں کو ہلاک کیا ہے۔

روس کی جانب سے اس دعوے پر کوئی تبصرہ نہیں کیا گیا اور نہ ہی اس دعوے کی آزاد ذرائع سے تصدیق ہوسکی ہے۔

حالیہ چند ماہ میں دولت اسلامیہ کو شامی صدر بشار الاسد کی فوجوں، باغی گروہوں اور کرد ملیشیا کے خلاف زمینی شکست کا سامنا ہے۔

خیال رہے کہ شام کے تنازعے کے حوالے سے سوئٹزر لینڈ کے دارالحکومت جنیوا میں بالواسطہ مذاکرات گذشتہ ایک ہفتے سے جاری ہیں تاہم اس میں زیادہ پیش رفت نہیں ہوسکی۔

اسی بارے میں