پوپ 12 تارکین وطن کو اپنے ساتھ ویٹیکن لےگئے

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption ویٹیکن کا کہنا ہے کہ ان کا یہ دورہ انسانی ہمدردی اور مذہبی نوعیت کا ہے

کیتھولک عیسائیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس یونانی جزیرے لیسبوس کا دورہ کرنے کے بعد 12 شامی تارکین وطن کو بھی اپنے ساتھ ویٹیکن لے گئے ہیں۔

بارہ افراد پر مشتمل ان تین خاندانوں میں چھ بچے بھی شامل ہیں اور یہ تمام شامی تارکین وطن مسلمان ہیں جو کہ شام میں بمباری کے نتیجے میں اپنے گھروں کی تباہی کے بعد یہاں آئے تھے۔

پوپ فرانسس تارکین وطن سے ملنے پہنچ گئے

روم پہنچنے پر ان شامی تارکین وطن کا والہانہ استقبال کیا گیا ہے۔

یونانی جزیرے لیسبوس سے واپسی پر پوپ فرانسس نے تارکین وطن کے ہجوم سے کہا کہ وہ امید کا دامن نہ چھوڑیں۔انھوں نے پوری دنیا سے مخاطب ہو کر کہا کہ وہ ان تمام تارکین وطن کے لیے رحم کا جدبہ دکھائیں۔

انھوں نے کہا کہ ان کے اس دورے کا مقصد ’انسانی بحران کی قبر‘ کو واضح کر کے دکھانا تھا۔

ویٹیکن نے ایک بیان میں کہا ہے کہ پوپ فرانسس پناہ گزینوں کے ’خیر مقدم کے جذبے کا اظہار‘ کرنا چاہتے ہیں۔

پوپ فرانسس نے یونانی جزیرے پر قائم تارکین وطن کے اس مرکز کا دورہ کیا جہاں 3000 کے قریب افراد پناہ حاصل کرنے یا ترکی واپس بھیجے جانے کا انتظار کر رہے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption بارہ افراد پر مشتمل ان تین خاندانوں میں چھ بچے بھی شامل ہیں اور یہ تمام شامی تارکین وطن مسلمان ہیں

اطلاعات کے مطابق ان تین خاندانوں کا انتخاب انتہائی پریشان حال تارکین وطن میں سے قرعہ کے ذریعے کیا گیا ہے اور ابتدائی طور پر ان کی دیکھ بھال سینٹ ایگیدیو برادری کرے گی جو کہ امدادی کاموں کے لیے جانی جاتی ہے۔

خیال رہے کہ لیسبوس تارکین وطن کی جانب سے یورپ میں داخلے کا اہم راستہ رہا ہے اور گذشتہ سال یورپ داخل ہونے والے دس لاکھ سے زائد افراد اسی راستے سے آئے تھے۔

گذشتہ ماہ تارکین وطن کے حوالے سے یورپی یونین اور ترکی کے درمیان معاہدے کے بعد ہزاروں کی تعداد میں افراد یہاں پھنس گئے ہیں۔

ویٹیکن کا کہنا ہے کہ ان کا یہ دورہ انسانی ہمدردی اور مذہبی نوعیت کا ہے اور اس کو ملک بدری پر تنقید کے طور پر نہیں دیکھنا چاہیے۔

پوپ کی آمد سے قبل موریا کیمپ میں ایک شامی شخص نے خودکشی کی کوشش کی جب اس کو بتایا گیا کہ اسے ترکی واپس بھیجا جاسکتا ہے۔

اس کے بعد تارکین وطن نے احتجاج کیا اور یورپ میں قیام اور بہتر سلوک کا مطالبہ کیا۔

ویٹیکن کی جانب سے اس مختصر دورے کا مقصد مشکل حالات میں توجہ مبذول کروانا ہے۔

اسی بارے میں