بغداد: پارلیمان کے باہردھرنا ختم، مظاہرین کی واپسی

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption مظاہرین نئی کابینہ کی منظوری میں تاخیر پر ناراض ہیں

عراق کے دارالحکومت بغداد کے گرین زون میں ہزاروں کی تعداد میں مقتدیٰ الصدر کے حامی شیعہ مظاہرین نے دھرنا ختم کرتے ہوئے واپس جانا شروع کر دیا ہے۔

مظاہرین نے سنیچر کو پارلیمان کی عمارت پر دھاوا بولنے کے بعد عمارت کے باہر ڈیرا ڈال رکھا تھا۔

منتظمین کی جانب سے لاؤڈ سپیکرز پر گرین زون میں دھرنا ختم کرنے کے اعلانات کیے گئے۔

اس سے قبل وزیر اعظم حیدر العبادی نے پارلیمان پر دھاوا بولنے والے مظاہرین کی گرفتاری کا حکم دیا تھا۔

یہ گرین زون بغداد کا وہ علاقہ ہے جہاں سخت ترین سکیورٹی میں دنیا کے سفارتخانے، اہم دفاتر اور عمارتیں واقع ہیں۔

مظاہرین کی بڑی تعداد شیعہ رہنما مقتدیٰ الصدر کے حامیوں پر مشتمل تھی اور وہ نئی کابینہ کی منظوری میں تاخیر پر ناراض تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption منتظمین کی جانب سے اتوار کی شام مظاہرہ ختم کرنے کی اعلان کیا گیا

مظاہرین کی جانب سے اصلاحات کو نظر انداز کرنے کا الزام حکومت پر عائد کیا جارہا ہے جبکہ حکومت خود کو دولت اسلامیہ کہلوانے والی شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ کے خلاف جنگ اور تیل کی پیداوار میں کمی جیسے مسائل کا سامنا ہے۔

دولت اسلامیہ عراق کے مغربی اور شمالی علاقوں پر قابض ہے اور اس نے اتوار کو جنوبی شہر سماوہ میں ہونے والے دو خودکش حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے جس میں کم از کم 33 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

خبررساں ادارے اے ایف پی کے مطابق مظاہرے کے منتظمین کی جانب سے اتوار کی شام مظاہرہ ختم کرنے کی اعلان ایک مذہبی دن کے احترام کو مدنظر رکھتے ہوئے کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

خیال رہے کہ حیدر العبادی نے 2014 میں اقتدار سنبھالنے کے بعد کہا تھا کہ وہ ملک سے کرپشن اور فرقہ وارانہ کشیدگی کو ختم کر دیں گے لیکن ابھی تک وہ اس میں ناکام ثابت ہوئے ہیں۔

مقتدیٰ الصدر عراق میں مہدی آرمی نامی ملیشیا کے سربراہ ہیں جنھوں نے ملک میں امریکہ کے خلاف زبردست مہم شروع کر رکھی تھی۔

سنہ 2006 تا 2007 میں ان کی عسکری تنظیم پر ہزراوں سنیوں کو تشدد کر کے قتل کرنے کا بھی الزام ہے۔ اس دوران وہ ایران فرار ہوگئے تھے۔

وہ 2011 میں ایران سے دوبارہ عراق واپس آ گئے تھے اور عراقیوں کو امن کے لیے متحد ہونے کی اپیل کی تھی۔

اسی بارے میں