بغداد میں کار بم دھماکے، ہلاکتوں کی تعداد 93 ہوگئی

اپ کی ڈیوائس پر پلے بیک سپورٹ دستیاب نہیں

عراق میں پولیس اور طبی ذرائع کا کہنا ہے کہ ملک کے دارالحکومت بغداد کے جنوبی حصے میں ہونے والے تین کار بم دھماکوں میں ہلاک ہونے والوں تعداد کم از کم 93 ہو گئی ہے۔

حکام کے مطابق پہلا دھماکہ شیعہ آبادی والے علاقے صدر سٹی میں بدھ کی صبح اس وقت ہوا جب بازار میں لوگوں کی بھیڑ تھی۔ اس دھماکے میں 64 افراد ہلاک اور 87 زخمی ہوئے۔

* عراق میں خودکش دھماکہ، کم سے کم 29 افراد ہلاک

* بغداد میں خود کش حملے: 31 ہلاک، 50 زخمی

دوپہر کو دو مزید خودکش کار دھماکے شمالی ضلعے کاظمیہ اور جامعہ میں ہوئے جن میں پولیس چوکیوں کو نشانہ بنایا گیا۔ ان دھماکوں میں کم از کم 29 افراد ہلاک ہوئے۔

خود کو دولتِ اسلامیہ کہلانے والی شدت پسند تنظیم نے اس دھماکے کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس نے شیعہ افراد کو نشانہ بنایا ہے۔

خیال رہے کہ عراق کے شمالی اور مغربی علاقوں پر کنٹرول رکھنے والا سنی گروپ اکثر شیعہ افراد کو نشانہ بناتا رہتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حکام کا کہنا ہے کہ کار بم دھماکے میں متاثرہ ہونے والے افراد میں اکثریت خواتین اور بچوں کی ہے

صدر سٹی میں ہونے والے پہلے دھماکے عینی شاہد اور پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکہ خیز مواد پھلوں اور سبزیوں کے ٹرک میں چھپایا گیا تھا۔

ایک عینی شاہد نے خبر رساں ادارے اے پی کو بتایا کہ یہ دھماکہ ایک پِک اپ ٹرک کے ذریعے کیا گیا جس میں پھل اور سبزیاں لدی ہوئی تھیں۔

عینی شاہد نے مزید بتایا کہ ڈرائیور ٹرک کو بازار میں پارک کرنے کے فوراً ہی بھیڑ میں غائب ہو گیا۔

45 سالہ عینی شاہد کریم صالح کے مطابق دھماکے بہت شدید تھا۔

حکام کا کہنا ہے کہ بم دھماکے میں متاثرہ ہونے والے افراد میں اکثریت خواتین اور بچوں کی ہے اور ان میں سے زیادہ تر کی حالت نازک ہے۔

حکام کے مطابق دھماکے سے قریبی عمارتوں اور دیگر گاڑیوں کو بھی نقصان پہنچا۔

عراق میں فروری میں ہونے والے دو دھماکوں میں کم سے کم 70 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

یہ دھماکے بھی صدر سٹی کے ہی ایک بازار میں ہوئے تھے۔

اسی بارے میں