’یورپی یونین چھوڑنے سے معاشی ترقی پر منفی اثر پڑے گا‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP

عالمی مالیاتی فنڈ کا کہنا ہے کہ اگر برطانیہ نے یورپی یونین چھوڑنے کے حق میں ووٹ دیا تو معاشی ترقی پر منفی اثرات پڑیں گے۔

آئی ایم ایف نے یہ بات برطانیہ کی معاشی حالت پر رپورٹ میں کہی ہے۔ مالیاتی فنڈ کا کہنا ہے کہ یورپی یونین چھوڑنے سے برطانیہ میں خاصے وقت کے لیے غیر یقینی صورت حال پیدا ہو جائے گی۔

اس غیر یقینی صورت حال کے باعث مالیاتی مارکیٹس میں سرمایہ کاری زیادہ دیر نہیں رہے گی اور معاشی پیداوار میں کمی واقع ہو گی۔

آئی ایم ایف نے مزید کہا ہے کہ یورپی یونین چھوڑنے سے لندن عالمی مالیاتی مرکز کا درجہ بھی کھو دے گا۔

آئی ایم ایف نے رپورٹ میں کہا ہے کہ یورپی یونین سے علیحدہ ہونے کے بعد 2016 میں متوقع ترقی کی شرح دو فیصد سے کم ہو جائے گی جبکہ درمیانے عرصے کے لیے 2.25 فیصد تک واپس آ جائے گی۔

تاہم مالیاتی ادارے نے مزید کہا کہ یورپی یونین چھوڑنے کے حوالے سے خدشات نے حالیہ مہینوں میں برطانوی مارکیٹوں پر ممکنہ طور پر برا اثر ڈالا ہے۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ رواں سال کی پہلی سہ ماہی میں کمرشل اثاثوں کی خرید و فروخت میں 40 فیصد کمی ہوئی ہے۔

آئی ایم ایف نے کہا ہے کہ یورپی یونین میں رہنے یا نہیں رہنے کا فیصلہ تو ووٹرز نے کرنا ہے لیکن ان کا فیصلہ معاشی اور غیر معاشی عوامل پر اثر انداز ہو گا۔

اسی بارے میں