افغانستان میں ٹرانسپورٹ طیارہ گرنے سے سات ہلاک

تصویر کے کاپی رائٹ KUAM
Image caption سوشل میڈیا پر جاری کی گئی تصاویر میں طیارے کے ملبے سے دھوئیں کے اٹھتے ہوئے بادل دیکھے جاسکتے ہیں

افغانستان میں امریکی فوج کے مطابق ملک کے جنوب میں ہوائی جہاز کے حادثے میں سات افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

امریکی خبر رساں ایجنسی اے پی کے مطابق حادثے کا شکار ہونے والا جہاز ٹرانسپورٹ مقاصد کے لیے استعمال کیا جا رہا تھا اور یہ آذربائیجان کی سلک وے ایئر لائنز کی ملکیت تھا۔

امریکی فوج کے مطابق صوبہ ہلمند میں واقع فوجی اڈے سے جہاز ٹیک آف یعنی اڑان بھرتے ہوئے گر کر تباہ ہو گیا۔

حکام کے مطابق جہاز میں نو افراد سوار تھے جن میں سات ہلاک ہو گئے جبکہ دو شدید زخمیوں کو قندہار منتقل کر دیا گیا ہے۔

اس سے پہلے جمعرات کو امریکی فضائیہ کا کہنا ہے کہ اس کا ایک بی 52 بمبار طیارہ بحرالکاہل میں گوام جزیرے میں واقع امریکی اڈے پر گر کر تباہ ہوگیا ہے۔

امریکی فضائیہ کے مطابق طیارہ پرواز کے چند لمحوں کے بعد ہی حادثے کا شکار ہوگیا جبکہ عملے کے سات ارکان اس حادثے میں محفوظ رہے ہیں۔

٭ بی 52 بمبار طیارہ: امریکی فضائیہ کا دادا

یہ حادثہ انڈرسین ایئرفورس بیس پر بدھ کو مقامی وقت کے مطابق آٹھ بج کر 30 منٹ (22:30 جی ایم ٹی) پر پیش آیا۔

سوشل میڈیا پر جاری کی گئی تصاویر میں طیارے کے ملبے سے دھوئیں کے بادل دیکھے جاسکتے ہیں۔

یہ بمبار طیارہ بحرالکاہل میں واقع امریکی جزیرے میں شمالی ڈیکوٹا سے تعینات کیا گیا تھا اور خطے میں امریکی فوج کے مستقل قیام کا حصہ تھا۔

مقامی نیوز سائٹ کوام کے مطابق گوام کے گورنر کے دفتر کی طرف سے جاری کر دیا پیغام میں بتایا گیا کہ ’ہم عوام کو یقین دہانی کرواتے ہیں کہ یہ بظاہر کوئی حملہ نہیں تھا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption بی 52 بمبار طیارے امریکی فوج کا گذشتہ 60 سال سے اہم حصہ ہیں

فضائیہ کی جانب سے مزید تفصیلات سے آگاہ نہیں کیا گیا تاہم اس کا کہنا تھا کہ اس حادثے سے پیدا ہونے والے ماحولیاتی اثرات کو کم کرنے کے لیے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

خیال رہے کہ ویتنام کی جنگ سے لے کر افغانستان میں فوجی کارروائیوں تک، بی 52 بمبار طیارے امریکی فوج کا گذشتہ 60 سال سے اہم حصہ ہیں۔

اس کی ذمہ داری امریکہ کو فوری طور پر عمومی اور جوہری حملوں کی صلاحیت فراہم کرنا ہے۔

اسی بارے میں