رمضان قادروف کی بلی واپس کرو ورنہ۔۔۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption رمضان قادروف نے لکھا ’ہماری بلی غائب ہو گئی جس کا بچوں سےبہت لگاؤ تھا‘

چیچنیا کےمطلق العنان رہنما رمضان قادروف نےسوشل میڈیا پر اپنی گم شدہ بلی کی واپسی کی اپیل کی ہے جسے چیچنیا سے باہر لوگوں نے ان کے طرز حکومت پر طنز کرنے کے لیے استعمال کرنا شروع کر دیا ہے۔

کئی لحاظ سے یہ اشتہار ایک عام سی بلی کی گمشدگی کا اشتہار لگتا ہے لیکن یہ کسی عام شخص کی بلی نہیں ہے بلکہ چیچنیا کے آمر رمضان قادروف کی بلی ہے۔

رمضان قادروف نے اپنے اٹھارہ لاکھ انسٹاگرام فالورز کو اپنی پسندیدہ بلی کے تصویر کے ساتھ ایک پیغام میں لکھا :’ہماری بلی غائب ہوگئی ہے۔ دس روز پہلے وہ غائب ہوئی۔ ہم سب سمجھے کہ وہ جلد واپس آ جائے گی۔ اس کا بچوں سے بہت لگاؤ ہے۔ وہ ان (بچوں) کے ساتھ کھیلنا پسند کرتی ہے۔ لیکن اب ہم سخت پریشان ہیں۔ شاید وہ کسی پڑوسی کے گھر میں رہ رہی ہے۔ اگر آپ کو اس کے بارے میں کسی قسم کی کوئی اطلاع ہو تو برائے مہربانی ہمیں مطلع کریں۔ ہم آپ کے بہت مشکور ہوں گے۔ پیشگی شکریہ۔‘

رمضان قادروف کی سوشل پوسٹ کو 30 ہزار لوگوں نے پسند کیا لیکن اس پوسٹ کے مطلوبہ نتائج حاصل نہیں ہو سکے ہیں۔

چیچنیا سے باہر لوگوں نے رمضان قادروف کی اس سوشل پوسٹ کو ان کے طرز اقتدار پر طنز کرنے کے لیے استعمال کرنا شروع کر دیا ہے۔ برطانوی مزاح نگار جان اولیور نے امریکہ کے ایک ٹی وی شو میں رمضان قادروف کی اس سوشل پوسٹ کا مذاق اڑیا۔

جان اولیور نے رمضان قادروف کی ایسی تصویر پوسٹ کی جس میں ولادی میر پوتن کی تصویر والی شرٹ پہنے بیٹھے ہیں۔ انھوں نے ایک واقعے رپورٹ کیا جس میں رمضان قادروف کا گم شدہ موبائل ڈھونڈنےکے لیے شادی کی تقریب میں شریک تمام افراد کی تلاشی لی گئی تھی۔ انھوں نے لوگوں کی مشورہ دیا کہ رمضان قادروف کو ناراض نہ کریں، یہ آپ کو مہنگا پڑ سکتا ہے۔

کچھ لوگوں نے رمضان قادروف کو مشورے دینے شروع کر دیے ہیں۔

سنیا میاں نے روسی صدر ولادی میر پوتن کی ایک بلی پر بیٹھے ہوئے تصویر پوسٹ کر کے کیپشن لکھا کہ یہ شخص آپ کی مدد کر سکتا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ
Image caption ’یہ شخص آپ کو بلی ڈھونڈنےمیں مدد دے سکتا ہے‘

ہیومین رائٹس ای نامی گروپ رمضان قادروف کی سوشل پوسٹ کو بنیاد بنا کر ان کے انسانی حقوق کے ریکارڈ کی طرف توجہ مبذول کرائی۔ ہیومن رائٹس ای نامی گروپ FindKadrovsCat# ہیش ٹیگ سے لوگوں کو مشورہ دیا گیا کہ وہ رمضان قادروف کی بلی واپس کر دیں اس سے پہلے کہ وہ اپنی پرائیوٹ آرمی کے ذریعےآپ پر حملہ کردیں۔ ہیومین رائٹس گروپ الزام عائد کرتے رہے ہیں کہ رمضان قادروف کی 30 ہزار افراد پر مشتمل پر ایک پرائیوٹ آرمی ہے جس کے ذریعے وہ اپنے مخالفین کو نشانہ بناتے ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ

اسی بارے میں