قیدیوں کا تبادلہ، پوتن کے کہنے پر یوکرینی پائلٹ رہا

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters

روس نے ماسکو کے خلاف مزاحمت کی علامت بن جانے والی یوکرین کی خاتون پائلٹ نادیہ ساشنکو کو رہا کر دیا ہے۔

ان کی رہائی یوکرین کی جانب سے دو مبینہ روسی ایجنٹوں کے بدلے میں ہوئی ہے۔

کیئف پہنچنے پر نادیہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا ’میں آزاد ہو گئی۔‘

یاد رہے کہ روس نے ان کو مشرقی یوکرین میں دو روسی صحافیوں کو قتل کرنے کے الزام میں 22 سال قید کی سزا سنائی تھی۔ نادیہ اس الزام کی تردید کرتی ہیں۔

اس سے قبل دو روسی ایجنٹ کیئف سے ماسکو پہنچے۔ نادیہ کی سزا روسی صدر ویلادیمیر پوتن نے معاف کی ہے۔

صدر پوتن کا کہنا ہے کہ انھوں نے سزا اس لیے معاف کی کہ قتل کیے گئے دو روسی صحافیوں کے اہل خانہ نے نرمی برتنے کی درخواست کی تھی۔

دوسری جانب یوکرین کے صدر نے دو روسی ایجنٹوں کو معافی دی۔

نادیہ کو 2014 میں یوکرین میں روسی کے حمایت یافتہ علیحدگی پسندوں نے حراست میں لیا تھا۔

انھوں نے جیل میں بھوک ہڑتال کی اور جب وہ روس کی جیل میں تھیں تو یوکرین کی پارلیمنٹ اور کونسل آف یورپ کی پارلیمانی اسمبلی کی ممبر منتخب ہوئیں۔

دوسری جانب دو روسی ایجنٹوں پر الزام تھا کہ وہ روسی ملٹری انٹیلیجنس کے اہلکار ہیں تاہم روس اس کی تردید کرتا ہے۔

اسی بارے میں