فرانس میں جوہری بجلی گھروں کے ملازمین کی بھی ہڑتال

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption خیال رہے کہ فرانس کی تقریباً 75 فیصد بجلی جوہری توانائی سے حاصل ہوتی ہے

فرانس میں حکومتی کے ملازمتوں کے قوانین میں اصلاحات سے متعلق متنازع بل کے خلاف جاری احتجاج میں اب جوہری بجلی گھروں کے ملازمین بھی شامل ہو گئے ہیں۔

فرانس کے 19 میں سے 16 جوہری بجلی گھروں کے ملازمین کے ایک دن کے لیے ہڑتال کے حق میں ووٹ کے بعد جمعرات کو ہڑتال کی جا رہی ہے۔

اس کے علاوہ سی جی ٹی یونین نے ملک بھر میں احتجاجی مظاہروں کی کال بھی دے رکھی ہے۔

٭ فرانس: ملازمت سے متعلق متنازع بل پر ملک گیر مظاہرے

ہڑتالوں اور بجلی گھروں کی بندش کی وجہ سے پہلے ہی فرانس میں تیل صاف کرنے والے آٹھ کارخانوں میں سے چھ متاثر ہوئے ہیں۔

حکومت کا کہنا تھا کہ ہڑتال کی وجہ سے تیل صاف کرنے کے کارخانے بند ہونے سےانھیں تیل کے سٹریٹجک ذخائر کا استعمال کرنا پڑھ رہا ہے۔

یونین چاہتی ہے کہ حکومت کی جانب سے گذشتہ ماہ پارلیمان میں مزدوروں کے قوانین میں اصلاحات کے لیے پیش کیے جانے والے بل کو واپس لیا جائے جبکہ حکومت کا کہنا ہے کہ یہ اصلاحات ملک میں بڑے پیمانے پر بیروزگاری کم کرنے کے لیے ضروری ہیں۔

فرانس کی سرکاری توانائی کی کمپنی الیکٹرک ڈی فرانس نے جمعرات کو جوہری بجلی گھروں میں ہڑتال کے باعث سپلائی متاثر ہونے کے بارے میں تبصرہ کرنے سے انکار کیا ہے۔

خیال رہے کہ فرانس میں تقریباً 75 فیصد بجلی جوہری توانائی سے حاصل ہوتی ہے۔

منگل کو مرسیلی میں فوس سر مر کے مقام پر پولیس کی جانب سے ایک کارخانے میں ہڑتال کو ختم کرنے کی کوشش کے بعد جھڑپیں شروع ہو گئی تھیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ EPA
Image caption سی جی ٹی نے ملک بھر میں احتجاجی ریلیوں کی کال بھی دے رکھی ہے

پورٹ آف لا ہیور میں بھی درآمدات کو روکنے کے لیے تیل کے بڑے ٹرمینل میں کارکنوں کی ہڑتال متوقع ہے۔

ٹرانسپورٹ کے وزیر ایلائن ودالیز کا کہنا ہے کہ پیرس کے 40 فیصد پیٹرول سٹیشنز کو ایندھن حاصل کرنے میں دشواری کا سامنا ہے۔

جبکہ صارفین کسی بھی قسم کی قلت سے بچنے کے لیے جلد از جلد ایندھن خریدنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

بدھ کو فرانس کے صدر فرانسوا اولاند نے تمام وزراء سے کہا ہے کہ ’فرانس کے عوام کو یقین دلایا جائے کہ معیشت کے لیے سپلائی کو جاری رکھنے کی تمام تر کوششیں کی جائیں گی۔‘

دوسری جانب تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ فرانس کے پاس تقریباً چار ماہ کے ایندھن کے ذخائر بچے ہیں۔

فرانس میں مزدوروں کی یونینز کا احتجاج میں ریلوے ملازمین بھی شامل ہو گئے ہیں جس میں ٹرین ڈرائیوروں نے ہائی سپیڈ ٹرین سروسز کے ساتھ ساتھ مقامی اور مال بردار ٹرینوں کو بھی کم کر دیا ہے جبکہ جمعرات کو ٹرانسپورٹ کے دیگر شعبے بھی متاثر ہونے کا خدشہ ہے۔

پیرس میں بی بی سی کے نامہ نگار لوسی ولیئمسن کا کہنا ہے کہ ملک میں بڑھتے ہوئے مظاہروں کی وجہ سے دو ہفتے بعد شروع ہونے والی فٹبال چیمپیئن شپ یورو 2016 کے بارے میں بھی شدید تشویش پائی جاتی ہے۔

اسی بارے میں