مرغی کی ہمراہی میں دنیا کی سیر

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

یہ بہترین دوستی، رفاقت اور بقائے باہمی کی کہانی ہے۔

دو سال قبل ایک سمندر میں دو ہمسفروں کے درمیان ایسا رشتہ قائم ہوا کہ جس کے تحت اب وہ دنیا کا چکر لگا رہے ہیں اور گرم سرد دونوں موسم میں ایک ساتھ ہیں۔

ان میں سے ایک مسافر 24 سالہ نوجوان ہے اور دوسرا مسافر ایک مرغی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

24 سالہ نوجوان گوریک ساؤدی کشتی رانی کا تمام مشکل کام کرتے ہیں۔

مرغی کا نام مونیک ہے اور وہ کشتی پر بیٹھی نظارے سے لطف اندوز ہوتی رہتی ہے اور کبھی کبھی انڈے بھی دیتی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

ان دونوں کی عجیب مہم جوئی کی خبر فرانسیسی میڈیا میں سامنے آئی اور اس کے بعد سے انھیں سوشل میڈیا پر بہت قریب سے فالو کیا جا رہا ہے۔

گوریک فرانس کے شہر بریٹینی کے رہنے والے ہیں اور انھوں نے مئی 2014 میں مونیک کے ساتھ سفر شروع کیا تھا۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

انھوں نے افریقہ کے مغربی ساحل پر واقع کینری جزائر سے اپنا سفر شروع کیا تھا اور گذشتہ اگست تک آرکٹک جانے سے قبل کریبیائی سمندر میں سینٹ بارٹ تک پہنچ چکے تھے۔

گوریک نے جو اس وقت مغربی گرین لینڈ میں ہیں، بی بی سی کو بتایا: ’مجھے ایک ہی بار میں یہ باور ہو گیا کہ یہ میری ساتھی ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

’اس وقت یہ صرف پانچ چھ ماہ کی تھی اور کبھی بھی کینری جزائر سے باہر نہیں گئی تھی۔ نہ میں ہسپانوی بولتا ہوں اور نہ وہ فرانسیسی لیکن ہم ساتھ ہیں۔‘

گوریک نے دراصل ایک پالتو جانور کو اپنے ساتھ لے جانے کا منصوبہ بنایا تھا لیکن ایک مرغی ان کی فہرست میں شامل نہیں تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

’پہلے میں نے ایک بلی کے بارے میں سوچا لیکن پھر خیال آیا کہ اس کی دیکھ بھال میں بہت محنت ہوگی۔‘

انھوں نے بتایا کہ ’مرغی مناسب پسند تھی۔ اس کی دیکھ بھال میں زیادہ دقتیں نہیں اور اس سے سمندر میں انڈے بھی ملیں گے۔ لوگوں نے کہا کہ یہ نہیں ہو سکتا مرغی بہت دباؤ میں ہوگی اور انڈے نہیں دے گی۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

انھوں نے مزید کہا: ’لیکن کوئی مسئلہ نہیں ہوا۔ اس نے انڈے دیے۔ وہ اچھی طرح اس سفر سے ہم آہنگ ہوگئی اور بہت جلد مطمئن ہو گئی۔

’ایک معمول کے ہفتے میں مونک چھ انڈے دیتی ہے۔ یہاں تک کہ ٹھنڈے موسم میں اور جہاں تین ماہ تک سورج نہ ہو وہاں بھی۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

ان کا کہنا ہے کہ اس کی وجہ سے گرین لینڈ میں مقامی لوگوں نے دلچسپی دکھائی شاید اس لیے کہ وہاں کوئی پولٹری فارمنگ نہیں ہے۔

39 فٹ کی کشتی پر مونیک بہت آرام سے رہتی ہے۔ کشتی کا نام ’ایونک‘ جزیرے کے نام پر ہے جہاں گوریک بڑے ہوئے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

عام طور پر مونک کشتی میں گھومنے پھرنے کے لیے آزاد ہے لیکن جب موسم خراب ہوتا ہے تو گوریک اسے اس کے دڑبے میں ضرور ڈال دیتے ہیں۔

’ابتدا میں میں بہت پریشان تھا کہ اونچی اونچی لہریں ہوں گی اور وہ لڑکھڑا جا ئے گی اور وہ کشتی سے بھاگنے کا سوچے گی لیکن اس نے ہمیشہ اپنا توازن برقرار رکھا۔ وہ بہت بہادر ہے۔

’جب خراب ہوا چلتی ہے تو میں زیادہ محتاط ہو جاتا ہوں اور وہ اندر چلی جاتی ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

گوریک کو قرنطینہ کے قوانین کے بارے میں بھی ہوشیار رہنا ہے۔ ابھی تک تو دونوں کی دوستی برقرار ہے اور سوائے کینیڈا کے کسٹم آفیسرز کے ان کا کسی سے سابقہ نہیں پڑا ہے لیکن آنے والے وقت میں چیزیں بہت آسان نہیں ہوں گی۔

انھیں ان کی دوستی کے ٹوٹنے پر زیادہ پریشانی نہیں ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ ’میں مثبت سوچ رکھنے والا ہوں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

وہ کہتے ہیں کسی شخص کے ہم سفر ہونے کے بجائے ایک مرغی کا ساتھ اچھا ہے، ’لوگوں کے مقابلے یہ شکایت بالکل نہیں کرتی۔‘

’وہ ہر جگہ میرے ساتھ رہتی ہے اور کوئی مسئلہ پیدا نہیں کرتی۔ مجھے صرف اس کا نام مونیک لینا ہوتا ہے اور وہ میرے پاس آ جاتی ہے، مجھ پر بیٹھ جاتی ہے اور ساتھ رہتی ہے۔ وہ حیرت انگیز ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

’لیکن میں جھوٹ نہیں بولوں گا کبھی کبھی وہ میرے سر چڑھ جاتی ہے۔‘

ان کے اہل خانہ اور دوستوں نے مرغی کے ہمسفر منتخب کیے جانے پر کیا کہا؟

’انھوں نے کہا یہ بہت مضحکہ خیز ہے ویسے وہ مجھے ہمیشہ نارمل سمجھتے ہیں۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Guirec Soudee

اب دونوں آرکٹک ہوتے ہوئے بیرنگ آبنائے کے نیچے سے الاسکا میں نوم جانے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

اور وہاں سے کہا جائیں گے؟ ’اس کے بارے میں ابھی بات نہیں کی ہے لیکن جائیں گے ضرور۔ ہم اور مونیک بہت باتیں کرتے ہیں۔‘

اسی بارے میں